مان لیتے ہیں کہ محمد بن قاسم جارح تھا اور راجہ داہر فرزند زمین

مان لیتے ہیں کہ محمد بن قاسم جارح تھا اور راجہ داہر فرزند زمین

چلیے ایک لمحے کو مان لیتے ہیں محمد بن قاسم جارح تھا راجہ داہر فرزند زمین۔۔اورآپ دھرتی کے سچے سپوت۔

بس یہ بتا دیجیے کہ چارلس نیپیر کیا لعل شہباز قلندر کے مزار پہ چادر چڑھانے آیا تھا، سندھ کے سادات کا اکرام کرنے یا فقط پلہ مچھلی کھانے آیا تھا؟

کبھی جہل پرستوں کو میر ناصر خان تالپور کی تصویریں لے کر خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے سنا؟ کیا ان کے نزدیک میانی میں میر ناصر خان تالپور کو شکست دے کے سندھ پر قبضہ کرنے والا چارلس نیپیر بھی اتنا ہی قابل نفرت ہے؟

مزید جانیں: قوت مدافعت بہتر بنانے والے پھل اور سبزیاں

آزادی کے ستر پچھتر سالوں کے بعد ہم نے یہ بھٹکتی، بلکتی بدروحیں پائی ہیں جو ردعمل کے مارے خود اپنے آپ پر تہمت دھرنے میں دیر نہی کرتیں۔

دماغ کا کوڑھ اور کیا ہوتا ہے؟ کہ آپ مذاکرات کے بعد سمجھوتے پر آمادگی ظاہر کر کے واپس پلٹنے اور پھر دھوکے سے واپس پلٹ کر حملہ آور ہونے والے گورے نیپیر کے لیے منہ سے لفظ نہ نکالیں اور محمد بن قاسم کے لیے کہانیاں گھڑیں۔

پاکستان ٹرائب کا یوٹیوب چینل سبسکرائب کریں

سادات خواتین کے سندھ میں پناہ لینے کا گھناؤنا جھوٹ گھڑیں اور پھر اپنے آپ کو محقق اور سمجھدار بھی سمجھیں۔

ویسے کسی نے سچ ہی کہا تھا پھپھوندی صرف ڈبل روٹی کو ہی نہیں دماغ کو بھی لگ جاتی ہے، اور اٹھرا کا مرض تا دیر رہے، مشقت جھیلیں اور بچے مردہ جنتے رہیں تو نفسیاتی عارضے ہو ہی جاتے ہیں پھر آٹھویں مہینے مرنے والے بچے ویلینٹ بھی نظر آتے ہیں اور فاتح بھی۔

پاکستان ٹرائب کی خبریں/ویڈیوز/بلاگز حاصل کرنے کے لیے واٹس ایپ پر ہمارے ساتھ شامل ہوں

قاضی نصیر عالم

افسانوں کی کتاب ’کچے رنگوں کی محبت’ کے مصنف قاضی نصیر عالم میڈیا سائنسز میں انگلینڈ سے اعلی ڈگری حاصل کرچکے ہیں۔ دو دہائیوں سے زائد عرصے سے پاکستان میں صحافت سے وابستہ رہنے والے قاضی نصیر عالم سینئر پاکستانی صحافی ہیں جو سماجی، سیاسی اور تاریخی موضوعات پر لکھتے ہیں۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *