گرفتار فرد پر تشدد، آئین پاکستان کیا کہتا ہے؟

گرفتار فرد پر تشدد، آئین پاکستان کیا کہتا ہے؟

کیا آپ جانتے ہیں کہ آئین پاکستان کسی گرفتار فرد پر تشدد کی اجازت نہیں دیتا۔ آئین پاکستان کی شق کی ذیلی شق دو واضح کرتی ہے کہ “ثبوت حاصل کرنے کے لیے کسی بھی فرد کو تشدد کا نشانہ نہیں بنایا جا سکتا”۔

اس شق کے تحت پولیس یا کوئی بھی قانون نافذ کرنے والا ادارہ کسی پاکستانی شہری کو دوران حراست تشدد کا نشانہ نہیں بنا سکتا۔

یہ بھی پڑھیں: خیبرپختونخوا کے نئے میٹرک پاس صوبائی وزیرتعلیم کیوں خاص ہیں؟

یہ عمومی مشاہدہ ہے کہ پاکستان میں زیرحراست افراد کو تشدد کا نشانہ بنایا جاتا ہے لیکن یہ ایک سنگین جرم ہے۔ قانونی ماہرین کے مطابق اگر ثبوت موجود ہو اور ایسا کرنے والے اہلکار یا اہلکاروں کے خلاف مقدمہ کیا جائے تو نا صرف ان کی ملازمت ختم ہو سکتی ہے بلکہ انہیں جیل بھی بھیجا جا سکتا ہے۔

زیرحراست فرد پر تشدد کے معاملے پر گفتگو کرتے ہوئے ڈپٹی کمشنر اسلام آباد حمزہ شفقات نے واضح کیا کہ لوگوں کی اکثریت سمجھتی ہے کہ گرفتار افراد کو حوالات میں مار پیٹ سزا کا حصہ ہوتی ہے لیکن یہ ناصرف غیرقانونی بلکہ غیر آئینی بھی ہے۔

یہ بھی جانیں: ایجوکیٹڈ، ان پڑھ یا برابر: کس جوڑے کی زندگی اچھی گزرتی ہے؟

اس موقع پر انہوں نے یہ وضاحت بھی کہ کچھ لوگ عدالت کی جانب سے دیے گئے فزیکل ریمانڈ کو تشدد کی اجازت سمجھتے ہیں جب کہ ایسا نہیں ہے۔

جسمانی ریمانڈ کا مطلب یہ ہے کہ پولیس یا متعلقہ ادارہ فرد سے تفتیش کر سکتا ہے۔ اس کا کہیں بھی یہ مطلب نہیں کہ اس پر تشدد کیا جا سکتا ہے۔

جوڈیشل ریمانڈ یا عدالتی ریمانڈ پر ملزم کو محکمہ جیل یا جیل پولیس کے حوالے کر دیا جاتا ہے۔ جیل خانہ جات کا محکمہ پولیس سے الگ ہوتا ہے، قانون کے مطابق پولیس جیل میں داخل نہیں ہو سکتی۔

پاکستان ٹرائب کا یوٹیوب چینل سبسکرائب کریں

زیرحراست افراد پر تشدد سے متعلق متعدد ٹویٹس میں حمزہ شفقات کا کہنا تھا کہ ہمارے لیے آئین و قانون سے واقفیت لازم ہے تاکہ ہم ریاستی اداروں کے غلط برتاؤ سے محفوظ رہ سکیں۔

ان کے مطابق جب بھی کسی فرد پر تشدد کا نشان دیکھیں یا ثبوت پائیں تو معاملے کو فوری طور پر ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ یا سیشن جج کے علم میں لایا جائے۔

حمزہ شفقات کی ٹویٹ پر متعدد صارفین نے تبصرے کرتے ہوئے پولیس تھانوں، جیلوں کا ذکر کیا۔ کچھ صارفین نے امیر و غریب سے قانون کے الگ الگ برتاؤ پر تنقید کی جب کہ کچھ ایسے بھی تھے جنہوں نے آئین کے انگریزی میں لکھے جانے کا مقصد غریب افراد کو لاعلم رکھا جانا بتایا۔

پاکستان ٹرائب کی خبریں/ویڈیوز/بلاگز حاصل کرنے کے لیے واٹس ایپ پر ہمارے ساتھ شامل ہوں

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *