میاں صاحب اور مشورہ – ڈاکٹر ظفر اقبال

میاں صاحب اور مشورہ – ڈاکٹر ظفر اقبال

ایک صاحب نے پوچھا کہ کیا میاں صاحب نے آرمی ترمیمی بل کے حوالہ سے پارٹی ہائی کمان سے مشورہ کیا ہو گا۔

ان سے عرض کیا کہ بھائی
بنیادی فیصلے وہ فیملی سے مشورہ کے بغیر نہیں کرتے۔ ابا جی جب حیات تھے تو ان کی ہر بات حرف آخر ہوتی تھی۔

باقی یہ سمجھنا کہ اہم ترین اشوز پر احسن اقبال، مشاہد اللہ، شاہد خاقان عباسی ، راجہ ظفر الحق سے وہ مشورہ کریں گے، شاید شریف برادران پر ایک بوجھ لادنے والی بات ہے۔ خاندان کی بقا کی باتیں ظاہر ہے خاندان میں ہی ڈسکس کرنی ہوتی ہیں۔

یہ بھی پڑھیں: ‘سانوں کوالا لمپور بلا کے آپ نیازی کتھے رہ گیا’

عمران خان صاحب تو اس خاندانی مشورہ کے بوجھ سے بھی آزاد ہیں ۔ انہیں صرف سننا اور اطاعت کرنا ہے۔

چاہے ایک روز قبل اسی موقف کو شدید گالیاں عنایت کر چکے ہوں ۔ ان کی اپنی دی ہوئی یہ گالیاں انہیں کسی یو ٹرن سے نہیں روک سکتیں۔

پاکستان ٹرائب کی خبریں/ویڈیوز/بلاگز حاصل کرنے کے لیے واٹس ایپ پر ہمارے ساتھ شامل ہوں

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *