کراچی میں یہ نیا تماشہ کیا ہے؟

کراچی میں یہ نیا تماشہ کیا ہے؟

پاکستان کے سب سے بڑے شہر کراچی میں کچرے کے ڈھیر کوئی نئی بات نہیں لیکن اس بار صفائی کے نام پر ہونے والی تو، تو میں، میں بڑھ کر ایک نئے تماشہ کی شکل اختیار کر گئی ہے۔

کراچی کے سابق ستی ناظم اور ایم کیو ایم چھوڑ کر اپنی پارٹی بنانے والے مصطفی کمال نے گزشتہ کئی ہفتوں سے جاری تحریک انصاف اور میئر کراچی کی صفائی مہم سے متعلق گفتگو کرتے ہوئے انہیں شدید تنقید کا نشانہ بنایا۔ پریس کانفرنس میں جارحانہ لب و لہجہ میں گفتگو کرتے ہوئے مصطفی کمال نے شہر میں گندگی پر اپنی سابق پارٹی کے میئر کراچی وسیم اختر کو آڑے ہاتھوں لیا جس پر وسیم اختر نے کچھ نیا کرنے کی ٹھان لی۔

پریس کانفرنس کے چند گھنٹوں بعد میئر کراچی وسیم اختر کی جانب سے مصطفی کمال کو کراچی کا ‘گاربیج پراجیکٹ ڈائریکٹر’ مقرر کرنے کا اعلان کر دیا گیا۔ ان کا کہنا تھا کہ مصطفی کمال تین مہینے میں کراچی کو صاف کرکے دکھائیں، تمام میونسپل سروسز کے وسائل انہیں دیں گے۔

میئر کراچی کے دستخطوں سے جاری ہونے والے نوٹیفیکیشن کے مطابق مصطفی کمال فوری پر اس عہدے پر مقرر سمجھے جائیں گے اور ان کی یہ ذمہ داری رضاکارانہ نوعیت کی ہو گی۔

Image

نوٹیفیکیشن سامنے آئے کچھ ہی دیر ہوئی تھی کہ مصطفی کمال ایک بار سامنے آئے اور ایم کیو ایم کے لوگوں سے کہا کہ جہاں جہاں وہ ہیں وہاں چارج چھوڑ دیں۔ ان سے منسوب بیان میں دعوی کیا گیا کہ وہ کراچی صاف کر کے دکھائیں گے۔

ماضی میں ایم کیو ایم کے ٹکٹ پر کراچی کے ناظم اور پھر سینیٹر رہنے والے مصطفی کمال نے کہا کہ ضلع شرقی، غربی، کورنگی اوروسطی کےمتحدہ عہدے داران عہدہ چھوڑ دیں۔

میئر کراچی کی جانب سے جاری کردہ نوٹیفیکیشن کو اپنی نوعیت کا انوکھا واقعہ قرار دینے والوں کا کہنا ہے کہ کے ایم سی میں سینئر پوسٹنگ ہوتی ہے وہ میئر کا اختیار نہیں ہے۔

مصطفی کمال نے اپنی تقرری پر تبصرہ کرتے ہوئے کہا کہ میں اس نوٹیفکیشن کو مذاق نہیں سمجھ رہا بلکہ میں سنجیدہ ہوں، میں کراچی والوں کے لیے پروجیکٹ ڈائریکٹر کا عہدہ سنبھال رہا ہوں۔ انہوں نے کہا کہ میرے لیے کوئی شرم کی بات نہیں ہے۔

سابق ناظم کراچی اور موجودہ میئر کراچی کے درمیان عہدے لینے اور عہدے دینے کے انوکھے معاملہ نے شدت اختیار کی تو سماجی رابطوں کی ویب سائٹس ٹوئٹر اور فیس بک پر نیوٹرول صارفین نے دونوں کو آڑے ہاتھوں لیا جب کہ پارٹی ورکرز کی جانب سے اپنے اپنے رہنماؤں کا دفاع کیا جاتا رہا۔

اسی دوران ایم کیو ایم پاکستان کےکنوینر اور وفاقی وزیر ڈاکٹر خالد مقبول صدیقی کا بیان سامنے آ گیا جس میں انہوں نے میئر کراچی وسیم اختر کو ایم کیو ایم کے تمام بلدیاتی نمائندوں کے ہمراہ تمام تر توانائیاں شہر کی صفائی مہم میں استعمال کرنے کی ہدایت کی۔ بیان میں کہا گیا کہ بلدیاتی نمائندے مصطفی کمال کے کسی بھی نازیبا بیان کا جواب نہ دیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *