صحت کا انصاف: لاہور کے سرکاری اسپتالوں میں مفت ٹیسٹ کی سہولت ختم

صحت کا انصاف: لاہور کے سرکاری اسپتالوں میں مفت ٹیسٹ کی سہولت ختم

لاہور: وفاق اور پنجاب میں انصاف اور تبدیلی کے تحت اقتدار سنبھالنے والے تحریک انصاف کی حکومت نے لاہور کے سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے لیے مفت ٹیسٹ کی سہولت ختم کر دی ہے۔

بدھ کو سامنے آنے والی خبر میں کہا گیا ہے کہ لاہور کے سرکاری اسپتالوں میں مریضوں کے لیے مفت ٹیسٹ کی سہولت ختم کر دی گئی ہے جس کے بعد علاج کے لیے سرکاری طبی مراکز کا رخ کرنے والے نادار مریض مزید پریشانی کا شکار ہو سکتے ہیں۔

مختلف اسپتالوں کے حوالے سے اطلاعات میں کہا گیا ہے کہ سرکاری طبی مراکز پر میڈیکل ٹیسٹ کرانے کے لیے طویل قطاریں ہیں جہاں مریض خوار ہو رہے ہیں۔

حکومت کے نئے اقدام کے تحت او پی ڈی آنے والے مریضوں کو اب ٹیسٹ کی فیس دینا ہو گی۔

اسپتالوں میں پہلے سے ہی کمیاب سہولت سرے سے ختم کر دینے پر مریضوں کے ساتھ موجود لواحقین کا کہنا ہے کہ ٹیسٹ فیس عائد ہونے سے علاج مزید مشکل ہو جائے گا۔

نئے اقدام کے بعد معمولی بلڈ ٹیسٹ ہو یا ایڈوانس نوعیت کی طبی تشخیص، ہر دو صورتوں میں لازما فیس ادا کرنا ہو گی۔

یہ بھی دیکھیں: نئے پاکستان میں دواؤں کی بڑھتی قیمتوں سے پریشان ایک صارف کی ویڈیو وائرل

پاکستان تحریک انصاف کی رہنما ڈاکٹر یاسمین راشد نے وزارت کا حلف اٹھانے کے بعد کہا تھا کہ وہ طبی اداروں میں مزید سہولیات کی فراہمی کو یقین بنائیں گی۔

سرکاری اسپتالوں میں ٹیسٹ کے لیے فیس عائد کرنے کا اقدام ایک ایسے وقت میں کیا گیا جب پنجاب نے وزراء کے لیے 70 نئی گاڑیاں خریدنے کی منظوری دی ہے۔

سرکاری اسپتالوں میں ٹیسٹ کے لیے فیس عائد کر کے غریب مریضوں کے لیے مشکل پیدا کرنے اور وزراء کے لیے نئی گاڑیوں کی خریداری کے فیصلہ کو سوشل میڈیا پر تنقید کا نشانہ بنایا جا رہا ہے۔

ٹیلی ویژن میزبان منصور علی خان کا کہنا تھا کہ جس دن وزراء کے لیے گاڑیاں خریدی جا رہی ہیں اسی روز نادار مریضوں کے لیے ٹیسٹ کی سہولت ختم کی گئی ہے۔

غریب کش فیصلہ پر جہاں سوشل میڈیا صارفین حکومت کو کڑی تنقید کا نشانہ بنا رہے ہیں وہیں کچھ ایسے بھی ہیں جو تبدیلی سرکار کی حمایت جاری رکھے ہوئے ہیں۔

وزیر صحت ڈاکٹر یاسمین راشد بھی گزشتہ ماہ مارچ میں دیے گئے ایک بیان میں یہ تسلیم کر چکی ہیں کہ سرکاری ہسپتالوں کے آؤٹ ڈورز کے کچھ ٹیسٹوں پر نرخ بڑھائے گئے ہیں۔

سرکاری اسپتالوں کی او پی ڈی میں آنے والے مریضوں کی اکثریت کا تعلق معاشرے کے نادار طبقات سے ہوتا ہے جو وسائل نہ ہونے یا محدود ہونے کی وجہ سے ان مراکز کا رخ کرتے ہیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

فی الوقت ای کھوکھا مصنوعات کی ڈیلیوری صرف اسلام آباد میں دی جا رہی ہے۔ Dismiss