پاکستان اور بھارت کے درمیان عسکری توازن، کتنی حقیقت کتنا فسانہ | pakistantribe.com/urdu/

پاکستان اور بھارت کے درمیان عسکری توازن، کتنی حقیقت کتنا فسانہ

اسلام آباد: پاکستان اور بھارت کے درمیان کشیدگی میں حالیہ اضافہ اگر چہ کسی جانب رکتا محسوس ہو رہا ہے تاہم دونوں جوہری قوتوں کے درمیان موجود عسکری عدم توازن تشویشناک قرار دیا جاتا ہے۔

امریکا میں فعال آرمز کنٹرول ایسوسی ایشن اور انٹرنیشنل انسٹیٹیوٹ برائے اسٹریٹیجک اسٹڈیز (آئی آئی ایس ایس) کے مطابق دونوں ممالک کے درمیان عسکری تواز کے اعتبار سے خاصا نمایاں فرق موجود ہے۔

آئی آئی ایس ایس کے مطابق موجودہ صورتحال میں پاکستان اپنے عسکری یا دفاعی اخراجات پر تقریبا گیارہ ارب ڈالر خرچ کرتا ہے جو اس کی جی ڈی پی کا تین اعشاریہ چھ فیصد ہے۔ ہندوستان کی جانب سے اپنے جی ڈی پی کا دو اعشاریہ ایک فیصد خرچ کیا جاتا ہے تاہم یہ رقم 58 ارب ڈالر بنتی ہے۔

21 کروڑ سے زائد آبادی کے ملک پاکستان میں چھ لاکھ 53 ہزار 800 فوجی ہیں جب کہ مقابلتا ایک ارب 30 کروڑ آبادی کے حامل انڈیا میں افواج کی تعداد 14 لاکھ بیان کی جاتی ہے۔

پاکستانی افواج کو 2496 ٹینکوں، 1605 پکتربند اور 4472 توپوں کی معاونت حاصل ہے۔ دوسری جانب بھارت کے پاس ٹینکوں کی تعداد 3565، بکتر بند 336 اور 9719 توپیں موجود ہیں۔

آئی آئی ایس ایس کے جاری کردہ اعدادوشمار کے مطابق ہندوستان کے پاس 814 جنگی طیارے ہیں جب کہ پاکستانی فضاؤں کے محافظ لڑاکا طیاروں کی تعداد 425 ہے۔

یہ بھی دیکھیں: پاکستان پر انڈین سرجیکل اسٹرائک ایک ناکام آپریشن تھا؟ ڈیجیٹل فارنزک ماہرین حقائق سے پردہ اٹھاتے ہیں

اپنی حالیہ رپورٹ میں آئی آئی ایس ایس کا کہنا ہے کہ بین الاقوامی خریداریوں سمیت مقامی سطح پر فضائی عسکری پراگرامز کے تعطل کے دوران انڈین ایئر فورس کے جنگی طیاروں پر مشتمل اسکواڈرنز کی تکنیکی قوت اوسط سے کہیں کم ہے۔ تاہم 2020 کے اختتام تک ہندوستان روس سے ایس 400 حاصل کر رہا ہے۔

67 ہزار 700 کی افرادی قوت رکھنے والی ہندوستانی نیوی کے پاس جنگی طیاروں سے مسلح ایک ایئرکرافٹ کیرئیر، 16 آبدوزیں، 13 فریگیٹس، 14 ڈسٹرائرز، 106 پیٹرول اور ساحلوں پر لڑائی میں استعمال ہونے والے جہاز جب کہ 75 طیارے موجود ہیں۔

آئی آئی ایس ایس کی جانب سے 2019 میں لیے گئے جائزہ کے مطابق پاکستانی بحریہ 23 ہزار 800 کی افرادی قوت رکھتی ہے۔ اسے 8 آبدوزوں، 9 فریگیٹس، 17 پیٹرول اور 8 جنگی بحری جہازوں کی خدمات میسر ہیں۔

جوہری ہتھیاروں کے متعلق 2018 میں سامنے آنے والی رپورٹس کے مطابق پاکستان کے پاس 140 تا 150 جب کہ ہندوستان کے پاس 130 تا 140 ایٹمی ہتھیار موجود ہیں۔

پاکستان اور انڈیا کی عسکری قوت کا تقابل ذیل میں ایک ٹیبل کی صورت پیش کیا جا رہا ہے۔

  Pakistan India
Population 207,862,518 1,296,834,042
TOTAL MILITARY PERSONNEL 654,000 1,444,000
Army personnel 560,000 1,237,000
Navy personnel 23,800 67,700
Air personnel 70,000 127,200
Tanks 2,496 3,565
Armored personnel carriers 336 1,605
Artillery guns 4,472 9,719
Combat-capable aircraft 425 (F16=>45, Mirage 5=>90, Chengdu J-7=>139, JF-17 Thunder=>100) 814 (MiG-21=>113, MiG-29=>66, Sukhoi Su-30=>242, SEPECAT Jaguar=>91)
Aircraft carriers 0 1
Submarines 8 16
Frigates 9 13
Nuclear warheads 145 135
TOTAL DEFENSE BUDGET $11.2 billion $57.9 billion

پاکستان اور بھارت کے درمیان عسکری توازن، کتنی حقیقت کتنا فسانہ” ایک تبصرہ

اپنا تبصرہ بھیجیں