یو ایم ٹی کے چیئرمین پروفیسر حسن صہیب مراد سڑک حادثہ میں انتقال کر گئے

یو ایم ٹی کے چیئرمین پروفیسر حسن صہیب مراد سڑک حادثہ میں انتقال کر گئے

لاہور: یونیورسٹی آف مینجمنٹ اینڈ ٹیکنالوجی (یو ایم ٹی) لاہور کے چیئرمین پروفیسر حسن صہیب مراد سڑک حادثہ میں انتقال کر گئے ہیں۔

پروفیسر حسن صہیب مراد کے قریبی افراد کا کہنا ہے کہ وہ اپنے صاحبزادے کے ہمراہ گلگت گئے ہوئے تھے۔ سڑک حادثہ میں ان کے انتقال کی تصدیق کرتے ہوئے قریبی ذرائع کا کہنا ہے کہ واقعہ میں ان کا بیٹا بھی زخمی ہوا ہے۔

جماعت اسلامی کے شعبہ نشرواشاعت کی جانب سے جاری کردہ خبر میں کہا گیا ہے کہ ڈاکٹر حسن صہیب مراد کی گاڑی کو خنجراب کے قریب حادثہ پیش آیا جس میں وہ شدید زخمی ہوئے اور موقع پر ہی اپنے خالق حقیقی سے جاملے۔ ڈاکٹر حسن صہیب مراد کے اہل خانہ اس وقت یو کے میں ہیں ان کی واپسی پر نماز جنازہ کے بارے میں اعلان کیا جائے گا۔

ڈاکٹر حسن صہیب مراد یونیسکو کی آفیشل پارٹنر تنظیم انٹرنیشنل ایسوسی ایشن آف یونیورسٹیز کے پاکستان سے رکن بھی تھے۔

یو ایم ٹی کے بانی چیئرمین حسن صہیب مراد معروف اسلامی اسکالر اور جماعت اسلامی کے رہنما خرم مراد کے صاحبزادے تھے۔ این ای ڈی یونیورسٹی کراچی سے انجنئرنگ میں بیچلر ڈگری لینے اور واشنگٹن اسٹیٹ یونیورسٹی سے ایم بی اے کرنے والے پاکستانی اسکالر نے مینجمنٹ میں پی ایچ ڈی کی ڈگری یونیورسٹی آف ویلز سے حاصل کی تھی۔

ڈاکٹر حسن صہیب مراد یو ایم ٹی میں شجرکاری مہم کے دوران پودہ لگاتے ہوئے۔
ڈاکٹر حسن صہیب مراد یو ایم ٹی میں شجرکاری مہم کے دوران پودہ لگاتے ہوئے۔

پروفیسر حسن صہیب مراد پاکستان بھر میں موجود کالجز اور اسکولز کی ایک چین کے بھی چیئرمین تھے۔ آئی ایل ایم کالجز اور نالج اسکولز کی چینز پاکستان کے معروف تعلیمی اداروں میں شمار کی جاتی ہیں۔

22 اکتوبر 1959 کو کراچی میں پیدا ہونے والے حسن صہیب مراد اپنے والد کے ہمراہ مشرقی پاکستان کے شہر ڈھاکہ (موجودہ بنگلہ دیشی دارالحکومت) منتقل ہو گئے تھے جہاں انہوں نے ابتدائی تعلیم مکمل کی۔

58 برس کی عمر پانے والے حسن صہیب مراد 10 ستمبر 2018 کو اپنی زندگی کے 59 برس مکمل کرنے سے چند ہفتے قبل گلگت میں ہوئے سڑک حادثہ میں شہید ہو گئے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *