زینب قتل کیس کے تفتیشی مراحل اور پولیس رپورٹ کی تفصیل | pakistantribe.com/urdu/

زینب قتل کیس کے تفتیشی مراحل اور پولیس رپورٹ کی تفصیل

قصور: پنجاب کے ضلع قصور میں زیادتی کا نشانہ بن کر قتل ہونے والی معصوم زینب کے ملزم سے ہوئی تفتیش اور ڈی این اے رپورٹ کی تفصیل پاکستان ٹرائب کو موصول ہوئی ہے۔

قصور واقعہ کی تفتیش کے دوران مشترکہ تحقیقاتی ٹیم نے اٹھائے گئے اقدامات کی تفصیل جاری کی ہے۔ جن کے مطابق دنیا میں تیسری مرتبہ ایک ساتھ 1150 افراد کا ڈی این اے ٹیسٹ کیا گیا۔

پولیس کا کہنا ہے کہ تفتیشی عمل کے دوران 20 مشتبہ افراد کے پولیس گرافک ٹیسٹ کرائے گئے۔ زینب قتل کیس کے ملزم کی شناخت کے 3 لاکھ تصاویر کا جائزہ لیا گیا۔

زینب کے قاتل تک پہنچنے کے لئے 6 ہزار موبائل فونز کال ٹریس کی گئیں، جب کہ ضلع بھر سےمردم شماری کی لسٹوں سے 60 ہزار افراد کی انٹیروگیشن ہوئی۔

پولیس کے مطابق موبائل فونز کی لوکیشن چیک کرنے کے لئے 3 جدید ترین آئی سی سی سی گاڑیاں 24 گھنٹے ضلع قصور میں رہیں۔

 ڈھائی کلومیٹر کے دائرے میں 1200 خاندانوں کے افراد سے پوچھ گچھ کی گئی۔

بدھ کو زینب کے مبینہ قاتل کو عدالت میں پیش کیا گیا جہاں زینب سمیت 8 کمسن بچیوں کو زیادتی کے بعد قتل کرنے والے ملزم عمران کی ڈی این اے رپورٹ بھی پیش کی گئی۔

تفتیشی افسر کی جانب سے انسداد دہشت گردی کی خصوصی عدالت میں جمع کروائی گئی رپورٹ کے مطابق ملزم عمران نے 23 جون سال 2015 کو صدر قصور کے علاقے میں عاصمہ بی بی زیادتی کے بعد قتل کیا تھا۔ ملزم عمران کا ڈی این اے کمسن عاصمہ کے ساتھ میچ کر گیا۔

4 مئی 2016 کو زیادتی کے بعد قتل ہونے والی تہمینہ کے ساتھ ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا ۔

8 جنوری 2017 کو زیادتی کے بعد قتل ہونےوالی کمسن بچی عائشہ آصف کے ساتھ بھی ملزم کا ڈی این اے میچ کر گیا۔

24 فروری 2017 کو قتل ہونے والی ننھی بچی ایمان فاطمہ کیس میں ملزم عمران کا ڈی این اے میچ کر گیا ۔

11 اپریل 2017 کو معصوم نور فاطمہ کو زیادتی کے بعد قتل کرنے کے کیس کا ڈی این اے بھی ملزم عمران کے ساتھ میچ کر گیا۔

8 جولائی 2017 کو ننھی لائبہ کو زیادتی کے بعد قتل کرنے کے کیس کا ڈی این اے بھی ملزم عمران کے ساتھ میچ کر گیا۔

12 نومبر 2017 کو معصوم کائنات بتول کو زیادتی کے بعد قتل کرنے کے کیس کا ڈی این بھی ملزم عمران کے ساتھ میچ کر گیا۔

4 جنوری 2018 کو ننھی کلی زینب کو زیادتی کے بعد قتل کرنے کے کیس کا ڈی این اے بھی ملزم عمران کے ساتھ میچ کر گیا۔

اپنا تبصرہ بھیجیں