2050 تک سمندروں میں کچرا مچھلیوں‌ سے بڑھ جائے گا

2050 تک سمندروں میں کچرا مچھلیوں‌ سے بڑھ جائے گا

لندن: ماحولیاتی ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ 2050 تک سمندروں میں مچھلیوں سے زیادہ پلاسٹک کا کچرا موجود ہوگا۔

برطانوی تنظیم ایلن میکارتھر فاؤنڈیشن کی رپورٹ کے مطابق سمندروں میں کئی ٹن وزنی پلا سٹک سمندری حیات کے لیے بہت بڑا خطرہ بن چکا ہے ۔جس کے باعث آئندہ سالوں میں سمندری حیایتات بڑی تعداد میں ہلاک ہوسکتی ہے۔

تنظیم کی ایک جائزہ رپورٹ میں خبردار کیا گیا کہ ہر برس پلاسٹک کا آٹھ ملین ٹن کوڑا کرکٹ سمندر کی نظر کر دیا جاتا ہے، جس سے براہ راست سمندر ی حیات خاص کر مچھلی متاثر ہورہی ہے۔

رپورٹ میں اس بات کی نشاندہی بھی کی گئی کہ پلاسٹک کا کچرا مچھلیوں کی تعداد میں کمی کی بڑی وجہ ہے۔

ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ اگر 2050تک پلاسٹک کے کچرے میں کمی نہ کی گئی تو سمندر میں پلاسٹک کے کچرے کی مقدار مچھلیوں سے زیادہ ہوجائے گی جو سمندری حیات کے لیے تباہ کن ثابت ہوگا۔

یہ بھی دیکھیں: گلوبل وارمنگ دنیا سے چاکلیٹ ختم کر دے گی

گزشتہ برس 8 جون کو سمندروں کے عالمی دن کے موقع پر ماہرین کی جانب سے خبردارکیا گیا تھا کہ پلاسٹک کا کوڑا سمندروں کو بے انتہا نقصان پہنچا رہا ہے اس کی روک تھام کے لیے ہنگامی بنیادوں پر کام کرنے کی ضرورت ہے۔

ماہرین مسلسل اس بات سے خبردار کر رہے ہیں کہ ری سائیکل کئے بغیر سمندروں کے حوالے کیا جانے والا صنعتی و دیگر فضلہ سمندری حیاتیات کے علاوہ مجموعی ماحول کے لئے بھی زہر قاتل ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *