فضائی آلودگی سالانہ 13ہزار نوزائیدہ اموات کی وجہ بن گئی

فضائی آلودگی سالانہ 13ہزار نوزائیدہ اموات کی وجہ بن گئی

اسکوپیہ: جنوب مشرقی یورپ کے ملک جہوریہ مقدونیہ میں ہر برس فضائی آلودگی کی وجہ سے قبل از وقت پیدا ہونے والے 13ہزار بچے موت کا شکار ہو جاتے ہیں۔

حکام کی جانب سے جاری اعداد و شمار کے مطابق ریاست مقدونیہ کے دارالحکومت میں ہر برس فضائی آلودگی کی وجہ سے 13 ہزار انسان موت کے پنجوں میں جا پھنستے ہیں۔
مقامی رپورٹس میں اعدادوشمار کا ذکر کرتے ہوئے اسے آلودگی کی سنگین شکل قرار دیا گیا ہے۔
حکام کے مطابق اس وقت اسکوپیہ کی فضا میں آلودگی کے ذرات یورپی یونین کی جانب سے قائم کردہ ہوا کے معیار سے 10 گنا زیادہ ہیں۔ جس کے باعث یہاں کی ہوا میں سانس لینا انتہائی نقصان دہ ہو چکا ہے۔

ماہرین کے مطابق اسکوپیہ کی ہوا میں ذرہ پی ایم 10 پایا جاتا ہے جو باآسانی پھپھڑوں اور خون میں شامل ہو سکتا ہے اور یہ اتنا خطرناک ہوتا ہے کہ قبل از وقت پیدا ہونے والے کمزور بچے اسے برداشت نہیں کر پاتے۔ اگر اس میں مزید اضافہ ہوا تو شرح اموات میں بھی اضافے کا خدشہ ہے۔

حکام کا یہ بھی کہنا تھا کہ اس حوالے سے اقدامات کرنے ہوں گے تاہم ابھی عملی طور پر کچھ نہیں کیا جارہا۔

مقامی میڈیا کے مطابق عالمی سطح پر ہر ملک کو آلودگی کا سامنا ہے اس ہی لیے یوریی یونین کی جانب سے صحت مند ہوا کا ایک معیار بنایا گیا ہے جس کی پیرو ی ہر یورپی ملک پر لازم ہے، لیکن مقدونیہ میں ہوا میں پائی جانے والی آلودگی اس معیار سے 10 گنا زیادہ ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *