پاکستان میں مقبول سیاسی جماعت، ملکی سمت، آئندہ وزیراعظم؟ امریکی ادارے کے نتائج جاری

پاکستان میں مقبول سیاسی جماعت، ملکی سمت، آئندہ وزیراعظم؟ امریکی ادارے کے نتائج جاری

اسلام آباد: امریکی ادارے گلوبل اسٹریٹجک پارٹنرز نے پاکستان میں رائے عامہ کے تازہ جائزے کے نتائج جاری کئے ہیں جو ملک کی سمت، سیاسی جماعتوں کی مقبولیت اور آئندہ الیکشن کے حوالے سے آراء پر مشتمل ہیں۔

پاکستان ٹرائب اردو سروس کو دستیاب نتائن کے مطابق رواں ماہ اکتوبر کے آخر میں جاری کردہ سروے نتائج کے مطابق 52 فیصد پاکستانیوں کا خیال ہے کہ ملک مجموعی طور پر درست سمت میں نہیں جا رہا۔ 47 فیصد نے رائے دی کہ ملکی معاملات کی سمت درست ہے۔

پاکستان درست سمت میں بڑھ رہا ہے؟ گلوبل اسٹریٹجک پارٹنرز کا سروے | pakistantribe.com/urdu
پاکستان درست سمت میں بڑھ رہا ہے؟ گلوبل اسٹریٹجک پارٹنرز کا سروے

پاکستان کے درست سمت میں بڑھنے کی نشاندہی کرنے والے سے پوچھا گیا کہ وہ ایسا کیوں سمجھتے ہیں؟ جس پر 43 فیصد کا کہنا تھا کہ امن و امان کی وجہ سے، 30 فیصد نے ترقیاتی کام، 8 فیصد نے آپریشن ردالفسار، 5 فیصد نے کرپشن پر قابو، 4 فیصد نے بہتر طرز حکوت، 3 فیصد نے معاشی بہتری، 3 فیصد نے نواز شریف کی نااہلی، 3 فیصد نے مہنگائی، 1 فیصد نے غربیت کے خاتمے، 1 فیصد نے ملازمت کے مواقع اور 2 فیصد نے دیگر وجوہات کا اپنی رائے کا سبب قرار دیا۔

جن 51 فیصد افراد نے پاکستان کو غلط سمت میں آگے بڑھتا قرار دیا ان میں سے 17 فیصد نے اس کی وجہ کرپشن، 15 فیصد نے مہنگائی، 12 فیصد نے سیاسی استحکام نہ ہونے، 12 فیصد نے بیروزگاری، 8 فیصد لوڈشیڈنگ، 8 فیصد نے دہشتگردی، 5 فیصد نے خراب معاشی صورتحال، 3 فیصد نے غربت، 2 فیصد نے حکومتوں کی بری کارکردگی، ایک ایک فیصد نے سرحدی بے چینی، دھرنوں، ناانصافی جب کہ 8 فیصد نے کسی سبب کے بغیر ایسا ہونا تسلیم کیا۔

جی پی ایس کی جانب سے وجوہات کے آپشنز دیے بغیر شرکائے سروے سے پوچھا گیا کہ ان کی نظر میں پاکستان کا سب سے بڑا مسئلہ کیا ہے؟ جواب میں 21 فیصد نے بیروزگاری، 18 فیصد نے کرپشن، 13 فیصد نے لوڈشیڈنگ، 13 فیصد نے مہنگائی، 8 فیصد نے دہشتگردی، 5 فیصد نے غربت، 4 فیصد نے سیاسی عدم استحکام، 2 دو فیصد نے تعلیم اور خراب معیشت ایک ایک فیصد نے دھرنوں، گیس، پینے کے پانی، سڑکوں، اسپتالوں، ناانصافی اور دیگر کو بڑا مسئلہ قرار دیا۔

آئندہ انتخابات کے حوالے سے 2 جملے بتا کر شرکائے سروے سے رائے طلب کی گئی تو 48 فیصد کا کہنا تھا کہ ملکی معاملات کو بہتر سمت لے جانے کے لئے نئے لوگوں کو اختیار دینا چاہئے کہ وہ ملکی معاملت چلائیں، 47 فیصد کا کہنا تھا کہ گزشتہ عرصے کی نسبت ملک میں معاملات بہتر ہوئے اس لئے ایسے ہی آگے بڑھنے کی غرض سے موجودہ صورتحال کو برقرار رکھا جائے۔

آئندہ ہفتے قومی اسمبلی کے انتخابات ہوں تو آپ کس جماعت کو ووٹ دیں گے؟ اس اوپن اینڈڈ سوال کے جواب میں 38 فیصد نے ن لیگ 27 فیصد نے پی ٹی آئی 17 فیصد نے پیپلزپارٹی 3 فیصد نے ایم کیو ایم پاکستان ایک ایک فیصد نے جے یو آئی، اے این پی، جماعت اسلامی، بلوچستان نیشنل پارٹی، پی ایم ایل کیو جب کہ 4 فیصد نے دیگر جماعتوں کا انتخاب کیا۔

GSP Survey, Pakistanis voting trends for next elections | pakistantribe.com/urdu

آئندہ انتخابات کے حوالے سے پوچھے گئے سوال میں چاروں صوبوں کے نتائج علیحدہ سے بھی جاری کئے گئے۔ پنجاب میں 58 فیصد نے ن لیگ 23 فیصد نے پی ٹی آئی 6 فیصد نے پیپلزپارٹی 1 فیصد نے جماعت اسلامی جب کہ ایک فیصد نے آزاد امیدواروں کو ووٹ دینے کی رائے دی۔ خیبرپختونخوا میں 62 فیصد نے پی ٹی آئی 10 فیصد نے ن لیگ 5 فیصد نے اے این پی 2 فیصد نے پیپلزپارٹی ایک ایک فیصد نے جماعت اسلامی اور جے یو آئی کو ووٹ دینے کا کہا۔ سندھ میں 52 فیصد نے پیپلزپارٹی 12 فیصد نے ن لیگ 11 فیصد نے ایم کیو ایم پاکستان 14 فیصد نے پی ٹی آئی 2 فیصد نے فنکشنل لیگ 1 فیصد نے جے یو آئی اور ایک فیصد نے جماعت اسلامی کا انتخاب کیا۔ بلوچستان میں 33 فیصد نے پی ٹی آئی 15 فیصد نے ن لیگ 9 فیصد نے پیپلزپارٹی 8 فیصد نے بی این پی 6 فیصد نے پشتونخوا میپ 2 فیصد نے اے این پی اور ایک فیصد نے نیشنل پارٹی کا انتخاب کیا۔

GSP survey, provice wise voting trend in Pakistan | pakistantribe.com/urdu

سروے کے دوران شرکاء سے پوچھا گیا کہ کیا آپ پی ٹی آئی کو ووٹ دینے کے لئے سوچیں گے؟ 54 فیصد کا کہنا تھا کہ وہ ایسا نہیں کریں گے جب کہ 37 فیصد نے کہا کہ ہو سکتا ہے۔

GSP survey voting trend, why not vote for pti | pakistantribe.com/urdu

پی ٹی آئی کو ووٹ نہ دینے والوں سے سوال کیا گیا کہ وہ کس وجہ کی بنیاد پر ووٹ نہیں دیں گے؟ جواب میں 26 فیصد کا کہنا تھا کہ سیاسی تجربہ نہ ہونے، 10 فیصد نے عمران خان کی وجہ سے 9 فیصد نے پی ٹی آئی پسند نہ ہونے 5 فیصد نے مغربی کلچر کو فروغ دینے 5 فیصد نے دھرنوں 5 فیصد نے پی ٹی آئی کی کرپشن 5 فیصد نے دیانت دار نہ ہونے 4 فیصد نے ترقیاتی کام نہ کرنے 3 فیصد نے ذاتی مفاد 3 فیصد نے ملک کے لئے برا ہونے 2 دو فیصد نے مستقبل تاریک ہونے اور بری تقاریر جب کہ 1 ایک فیصد نے ریاستی اداروں پر تنقید اور خیبرپختونخوا میں بری کارکردگی کو اس کی وجہ کہا۔ 3 فیصد نے کوئی وجہ نہیں بتائی جب کہ 2 فیصد نے دیگر وجوہات کا ذکر کیا۔

GSP survey voting trend, resons why not vote pti | pakistantribe.com/urdu

پی ایم ایل این کو ووٹ نہ دینے کی وجوہات بیان کرتے ہوئے شرکائے سروے میں سے 54 فیصد نے کرپشن، 6 فیصد نے بری کارکردگی 4 فیصد نے ناپسندیدگی 3 فیصد نے ملک کے لئے اچھا نہ ہونے 2 دو فیصد نے پی ایم کی نااہلی، صرف پنجاب میں تری اور بددیانت افراد کی جماعت قرار دیا۔ ایک 1 فیصد نے مہنگائی، ترقیاتی کام نہ ہونے، غربت، بیروزگاری، خآندانی سیاست کو وجہ کہا جب تک 3 فیصد نے کوئی وجہ نہیں بتائی۔ اس سوال کا جواب لینے کے لئے بھی شرکاء کو آپشنز نہیں دئے گئے تھے بلکہ انہیں اپنی مرضی سے کوئی ایک وجہ منتخب کرنے کا اختیار دیا گیا تھا۔

GSP survey voting trend, reason why note vote pmln | pakistantribe.com/urdu

ن لیگ کی وفاقی حکومت کی کارکردگی کو 58 فیصد نے اچھا تسلیم کیا، ان میں سے 19 فیصد سے بہت اچھا جب کہ 39 فیصد نے اچھا مانا۔ 36 فیصد نے برا قرار دیا، ان میں سے 19 فیصد نے صرف برا جب کہ 17 فیصد نے بہت برا مانا۔

تینتالیس فیصد افراد نے موجودہ وزیراعظم شاہد خاقان عباسی کی کارکردگی کو اچھا قرار دیا جب کہ 36 فیصد نے برا کہا۔

پالیسیز یا سیاست سے ہٹ کر بطور فرد پسندیدگی کے حوالے سے سب سے زیادہ 65 فیصد نے شہباز شریف کو پسند کیا، نواز شریف 59 فیصد عمران خان کو 51 مریم نواز کو 49 فیصد بلاول بھوٹو کو 47 فیصد کلثوم نواز کو 41 فیصد جب کہ شاہد خاقان عباسی کو 39 فیصد لوگوں نے پسندیدہ قرار دیا۔

شہباز شریف کو 31 فیصد نے ناپسندیدہ 37 فیصد نواز شریف 47 فیصد نے عمران خان کو ناپسندیدہ جب کہ 46 فیصد نے مریم نواز 49 فیصد نے بلاول 50 نے کلثوم نواز اور 46 فیصد نے شاہد خاقان عباسی کا ناپسندیدہ مانا۔

ساٹھ فیصد افراد کا کہنا تھا کہ شہباز شریف اچھے وزیراعظم ہو سکتے ہیں 32 فیصد نے اس کا انکار کیا۔ عمران خان کو اچھا وزیراعظم ماننے والے 47 فیصد جب کہ نہ ماننے والے 42 فیصد رہے۔ مریم نواز کو 42 فیصد نے اچھا جب کہ 47 فیصد نے اچھا نہیں مانا۔ کلثوم نواز کو 41 فیصد نے وزارت عظمی کے لئے پسند کیا جب کہ 49 فیصد نے ناپسندیدگی ظاہر کی۔

گلوبل اسٹریٹجک پارٹنرز (جی ایس پی) نامی امریکی ادارے کی جانب سے سروے میں 65 فیصد مردوں اور 35 فیصد خواتین سے رائے لی گئی۔ ان میں 42 فیصد شہری اور 58 فیصد دیہی علاقوں کے مکین تھے۔ 18 تا 24 سال کے 24 فیصد 26 تا 40 سال کے 50 فیصد 41 تا 50 سال کے 15 فیصد اور 51 برس سے زائد عمر والے 11 فیصد افراد شامل تھے۔ سروے کے دوران پنجاب سے 56 فیصد سندھ سے 24 فیصد خیبرپختونخوا سے 14 فیصد اور بلوچستان سے اعشاریہ 6 فیصد افراد کی رائے لی گئی۔

 

Shahid Abbasi

Shahid Abbasi is a Founder and Editor of Pakistan's fastest growing indepednent and bilingual news website, pakistantribe.com

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *