کالعدم تنظیم انصار الشریعہ کیا ہے؟

کالعدم تنظیم انصار الشریعہ کیا ہے؟

کراچی: چند روز قبل ایم کیو ایم کے پارلیمانی لیڈر خواجہ اظہار الحسن پر حملے کے بعد ایک بار پھر سامنے آنے والے نام انصارالشریعہ کے متعلق متعدد سوالات جواب طلب ہیں۔

انصار الشریعہ نامی گروہ کون ہے؟ اچانک کہاں سے آیا ہے؟ کراچی ہی میں ہر کچھ عرصے بعد ایسا کوئی گروپ کہاں سے ابھر کر سامنے آ جاتا ہے۔

پاکستانی میڈیا رپورٹس کے مطابق سیکیورٹی اداروں کا کہنا ہے کہ انصار الشریعہ کے سربراہ کا نام ابوذر برمی ہے جو ماضی میں کراچی کے علاقے کورنگی کا رہائشی رہا ہے۔

انصار الشریعہ کے سربراہ کے متعلق دعوی کیا گیا ہے کہ وہ فی الوقت افغانستان سے رہ کر اپنے گروہ کو آپریٹ کر رہا ہے۔

سیکیورٹی اداروں سے وابستہ رپورٹس کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا ہے کہ اس گروہ سے وابستہ 8 تا 10 ٹارگٹ کلرز شہر میں موجود ہیں جو مختلف اوقات میں سیکیورٹی اداروں کو نشانہ بنا چکے ہیں۔

خواجہ اظہار الحسن پر حملے کے مرکزی ملزم کے طور پر پیش کئے جانے والے عبدالکریم سروش صدیقی کے بارے میں بھی کہا گیا ہے کہ اس کا تعلق انصار الشریعہ سے ہی ہے۔

 میڈیا رپورٹس کے مطابق حساس اداروں کی جانب سے کراچی کے مختلف علاقوں میں چھاپے مارے جا رہے ہیں جن میں اہم کامیابیاں بھی ملی ہیں۔ قانون نافذ کرنے والےا دارے کوشاں ہیں کہ گروہ کی مقامی اور سندھ کی قیادت پر ہاتھ ڈالا جائے۔

سیکیورٹی اداروں کی رپورٹس کے مطابق انصارالشریعہ ماضی میں فعال رہنے والے القاعدہ برصغیر سے تعلق رکھنے والا گروپ ہے جسے ابوذر بزمی نے منظم کیا ہے اور اس میں زیادہ تر بنگالی اور برمی نوجوان ہی شامل ہیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *