کراچی یونیورسٹی ہزاروں طلبا کا ریکارڈ ایجنسیز کو دے گی

کراچی یونیورسٹی  ہزاروں طلبا کا ریکارڈ ایجنسیز کو دے گی

کراچی: پاکستان کی بڑی سرکاری جامعات میں سے ایک کراچی یونیورسٹی نے ہزاروں طلبہ کا ریکارڈ قانون نافذ کرنے والے اور تفتیشی اداروں کو دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کے نمائندہ کے مطابق کراچی یونیورسٹی کی انتظامیہ کی جانب سے اس بات کا حتمی فیصلہ کیا جانا تاحال باقی ہے۔

قبل ازیں میڈیا رپورٹس میں یہ بھی کہا گیا تھا کہ آئندہ جامعہ کراچی میں داخلہ لینے والے طلبہ کو مقامی پولیس اسٹیشن سے کیرکٹر سرٹیفیکیٹ لے کر بھی جمع کروانا ہو گا۔

اس نئی تجویز پر غور کیا جا رہا ہے جس کے بعد اس کی منظوری دی جائے گی۔

کراچی یونیورسٹی کے ذرائع کا کہنا ہے کہ تعلیم یافتہ نوجوانوں میں بڑھتی انتہا پسندی سے نمٹنے کے لیے جامعہ کراچی کی انتظامیہ نے ہزاروں طلبہ کا ریکارڈ ایجنسیوں کو دینے کا فیصلہ کیا ہے۔

نئے فیصلوں کے متعلق کہا گیا ہے کہ طلبہ کا ریکارڈ انسداد دہشتگردی کے شعبے (کاؤنٹر ٹیررازم ڈیپارٹمنٹ) کو دیا جائے جہاں اس مقصد کے لئے الگ ڈیپارٹمنٹ قائم ہو گا۔

یونیورسٹی کی جانب سے کراچی اور بیرون کراچی سے تعلق رکھنے والے طلبہ کا الگ الگ ریکارڈ سی ٹی ڈی کے حوالے کیا جائے گا۔

ذرائع جامعہ کراچی نے بتایا کہ اکیڈمک کونسل کے آئندہ اجلاس میں اس فیصلے کی منظوری لی جائے گی۔

یاد رہے کہ ایم کیو ایم کے رہنما خواجہ اظہار الحسن پر حملے کے مبینہ مرکزی ملزم عبدالکریم سروش صدیقی کے بارے میں معلوم ہوا ہے کہ وہ جامعہ کراچی کا طالب علم ہے۔

حملے کے متعلق پولیس ذرائع کا کہنا تھا کہ ایم کیو ایم کے افراد سے بھتے کے تنازعے پر حملہ آور نے خواجہ اظہار الحسن کو نشانہ بنایا ہے۔

دوسری جانب انصارالشریعہ نامی گروپ کی جانب سے بھی یہ دعوی سامنے آیا تھا کہ ایم کیو ایم رہنما کے خلاف کارروائی ان کی جانب سے کی گئی ہے۔

پولیس ذرائع کا کہنا ہے کہ اس تنظیم سے تعلق رکھنے والے افراد مختلف تعلیمی اداروں میں بھی زیر تعلیم ہیں۔ سیکیورٹی ذرائع سے منسوب رپورٹس میں دعوی کیا گیا ہے کہ کراچی میں پولیس اور رینجرز پر مختلف حملوں میں اسی سے وابستہ افراد ذمہ دار ہیں۔

تنظیم کے سربراہ کے متعلق کہا گیا ہے کہ اس کا نام ابو ذربرمی ہے جو اس وقت افغانستان میں موجود ہے جب کہ ماضی میں یہ کراچی کے علاقے کورنگی میں رہ چکے ہیں۔

میڈیا رپورٹس کے مطابق حساس اداروں کی جانب سے کراچی کے مختلف علاقوں میں چھاپے مارے جا رہے ہیں جن میں اہم کامیابیاں بھی ملی ہیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *