سابق آمر پرویز مشرف کا ڈاکٹر عبدالقدیر پر تازہ حملہ

سابق آمر پرویز مشرف کا ڈاکٹر عبدالقدیر پر تازہ حملہ

کراچی: سابق آمر پرویز مشرف نے ایک بار پھر پاکستان کو ایٹمی قوت بنانے کے پس پردہ مرکزی کردار ادا کرنے والے ڈاکٹر عبدالقدیر کو لفظی حملے کا نشانہ بنایا ہے۔

پاکستان ٹرائب کو دستیاب تفصیلات کے مطابق پرویز مشرف نے اپنی وجہ امتیاز بتاتے ہوئے کہا کہ میں دنیا کی ٹاپ ٹین یونیورسٹیز میں جا کر لیکچر دیتا ہوں انہیں (ڈاکٹر عبدالقدیر) وہاں کوئی پوچھتا بھی نہیں۔

قبل ازیں ان کا کہنا تھا کہ ڈاکٹر عبدالقدیر میرے سامنے روئے تھے اور گھٹنوں کے بل جھک گئے تھے۔

سابق آمر نے نجی ٹیلی ویژن دنیا نیوز کے اینکر کامران شاہد کے ساتھ انٹرویو میں یہ دعوے کئے۔

انہوں نے اپنے کیرئیر کے شرمناک ترین لمحے کے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ ملاقات کے دوران اس وقت کے امریکی صدر بش کے کہنے پر سی آئی اے چیف نے ایٹمی ہتھیاروں کے پھیلائو کے متعلق ڈاکٹر عبدالقدیر کے حوالے سے دستاویزات دکھائی تھیں جن میں ان کی تصاویر، دستخط وغیرہ شامل تھے۔

ان کا کہنا تھا کہ ہندوستان، افغانستان میں پاکستان کے خلاف کام کر رہا ہے۔ وہ دہشتگردوں کو ہمارے خلاف استعمال کرتا ہےا ور بلوچستان میں مداخلت کر رہا ہے۔

اپنی کمر درد کو جواز بنا کر پاکستان میں جاری عدالتی کارروائیوں سے فرار اختیار کرنے والے پرویز مشرف نے ا نکشاف کیا کہ 2013 کے بعد سے ہر سال 4 سے 5 ارب ڈالر سالانہ ترسیلات زر کے طور پر بھارت جا رہے ہیں۔

یہ بھی دیکھیں: ترکی ایف سولہ طیاروں کے لئے پاکستانی پائلٹ استعمال نہ کرے، امریکا

پرویز مشرف نے امریکی صدر کے متعلق بات کرتے ہوئے کہا کہ ڈونلڈ ٹرمپ کو افغانستان، پاکستان اور کشمیر کے متعلق کچھ پتہ نہیں ہے۔

سابق پاکستانی آمر کا یہ انٹرویو ایک ایسے وقت میں سامنے آیا ہے جب امریکا نے نیوکلیئر بم کی نئی اقسام کے تجربے کے متعلق اعلان کیا ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *