خزاں یا ٹھنڈے موسم میں بیوٹی بگاڑنے والی 8 غلطیاں

خزاں یا ٹھنڈے موسم میں بیوٹی بگاڑنے والی 8 غلطیاں

خوبصورتی پانا یا اسے برقرار رکھنا ہر عمر کی خواتین یا لڑکیوں کے لئے ایک مشکل ٹاسک ہوتا ہے لیکن یہ اس وقت ناممکن ہو جاتا ہے جب ہم بیوٹی بچانے کے نام پر اسے خود ہی بگاڑنا شروع کر دیتی ہیں۔

پاکستان ٹرائب لائف اسٹائل ڈیسک کی جانب سے ذیل میں کچھ ایسے پہلوؤں کی نشاندہی کی جا رہی ہے جن سے بچ کر آپ موسم سرما یا خزاں کے دوران اپنی خوبصورتی کو محفوظ رکھ سکتی ہیں۔

فزیکل ایکسفولائٹر استعمال نہ کریں:
ٹھنڈا موسم جلد سے نمی غائب کر دیتا ہے۔ ایسے میں اسکرب ایکسفولائٹر استعمال کرنے کے بجائے جلد کی بے چینی کو کم یا ختم کرنے کے لئے تیار کردہ کیمیکل ایکسفولائٹر استعمال کریں۔ کچھ ایسا منتخب کریں جس میں الفا اور بیٹا ہائیڈراکسی ایسذ موجود ہوں۔

لائٹ ویٹ موسچیرائزر استعمال نہ کریں:
اگرچہ گرمیوں میں آپ کی جلد کو تروتازہ رکھنے کے لئے لائٹ ویٹ موسچیرائزر بہتر رہتے ہیں لیکن خزاں کے آغاز یا ٹھنڈ شروع ہونا وہ وقت ہے جب انہیں گڈبائے کہنے کا ٹائم آ پہنچا ہے۔ اب ایسے موئسچیرائزر کا انتخاب کریں جو ہیومکٹینٹس رکھتا ہو تاکہ اندر سے نمی کو اسکن تک پہنچا سکے۔

یک رخی یا سنگل پرپز مصنوعات استعمال نہ کریں:
ایسی مصنوعات جو یک رخی کے بجائے کثیر الاستعمال یا ملٹی پرپز ہوں وہ خزاں اور سردیوں میں آپ کی جلد کے لئے بہترین ہیں۔ ایسے مصنوعات کا انتخاب کریں جو وٹامن سی ای کے عالوہ لائیکوپینس، سبز چاہئے اور انگور کے بیچوں کے ایکسٹریکٹ پر مبنی ہوں۔

سن اسکرین کا استعمال ترک نہ کریں:
سورج سے جلد کو پہنچنے والا نقصان پورے سال ہو سکتا ہے۔ برف سے ڈھکے ہوئے راستے بھی ریفلیکشن کی وجہ سے سورج ہی کی مانند جلد کو جھلسا سکتے ہیں۔ آپ سورج کی روشنی سے بھرے لیونگ روم میں بیٹھی ہوں یا دفتر میں موجود ہوں، یہ کہیں سے بھی اپنا اثر پیدا کر سکتا ہے، اس لئے موسم سرما میں ان مسائل سے بچنے کے لئے الٹرا وائلٹ پراٹیکشن کو برقرار رکھنا ضروری ہے۔
اس مقصد کے لئے روزانہ ایک اونس سن سکرین کو اپنے جسم کے تمام کھلے حصوں پر ضرور لگائیں۔

یہ بھی دیکھیں: صحت اور خوبصورتی کے لئے معجزاتی اثرات رکھنے والے پھول

طویل دورانئے کے غسل نہ کریں:
باہر کی سردی کو دیکھ کر شاور کے نیم گرم پانی کے نیچے زیادہ دیر رکنے کی کوشش نہ کریں، ایسا کرنا آپ کی جلد کے لئے بدترین مسائل پیدا کر سکتا ہے۔ گرمیوں میں جہاں بیرونی حدت زیادہ ہونے سے جسم آئل پیدا کرتا ہے وہیں سردیوں میں یہ عمل الٹ ہو جاتا ہے۔ جلد کی آئل پیدا کرنے کی صلاحیت فضا میں موجود نمی سے براہ راست تعلق رکھتی ہے۔ گویا فضا میں جتنی زیادہ حدت ہو گی جلد اتنا ہی آئل پیدا کرے گی گرم پانی آئل پیدا کرنے کے اس عمل کو بدتر شکل دے سکتا ہے۔ اگر آپ نے گرم پانی کا شور لینا ہے تو یقینی بنائیں کہ یہ کسی بھی صورت پندرہ منٹ سے زیادہ کے لئے نہ ہو۔

خشک ہوا کو گھر میں آنے کے بعد خود کو خشک کرنے کی اجازت نہ دیں:
سردیوں میں جہاں گھروں میں موجود ہیٹرز ٹمپریچر کو نارمل کرتے ہیں وہیں یہ فضا میں موجود نمی کو خشک کر جلد کو بھی خشکی دیتے ہیں۔ سردیوں میں فضا میں موجود نمی کا تناسب پہلے ہی کم ہوتا ہے جسے یہ اور کم کر دیتے ہیں۔ اس سب کا نتیجہ یہ نکلتا ہے کہ جلد بہت زیادہ خشک ہونا شروع ہو جاتی ہے۔ اس مسئلے سے بچاؤ کے لئے سوتے وقت ہیومیڈیفائر کی کمرے میں موجودگی کو یقینی بنائیں تاکہ جلد کی نمی برقرار رہ سکے۔

یہ بھی جانیں: آپ کا لائف پارٹنر واقعی آپ سے پیار کرتا ہے یا صرف ہوس کا مارا ہوا ہے؟

ایکنی مصنوعات کا بے جا استعمال نہ کریں:
سخت ایکنی مصنوعات حساس جلد کے لئے مشکلات پیدا کر کے اسے سرخ اور الجھی ہوئی بنا سکتی ہیں۔ اس مسئلے سے بچنے کے لئے ہفتے میں دو بار اپنے چہرے کو پندرہ پندرہ منٹ کے لئے بھاپ ضرور دیں۔ اگر آپ کے چہرے پر ایکنی موجود ہیں تو فیشل کلینزر استعمال کریں۔ اگر عام درجے سے زیادہ مقدار میں ایکنی موجود ہے تو اپنے جلدی امراض کے ماہر معالج سے مشورہ کریں تاکہ وہ سرما میں دوا کی مقدار کو محدود رکھ کر جلد کو محفوظ رکھنے کے لئے رہنمائی کر سکے۔

الکوحل ملے ٹونرز استعمال نہ کریں:
تقریبا تمام ہی اسکن کئیر مصنوعات میں پائے جانے والے اجزاء میں ایک الکوحل بھی ہے جو حد سے زیادہ خشکی پیدا کرتا ہے۔ ایسے ٹونر استعمال کریں جو الکوحل کے بجائے دیگر اجزاء سے ترتیب دیے گئے ہوں۔

خوبصورتی میں اضافے یا اس کی حفاظت کے لئے آپ کے پاس بھی کچھ ماہرانہ تجاویز موجود ہیں تو ہمیں [email protected] پر ای میل کریں۔ انہیں آپ کے نام کے ساتھ شائع کیا جائے گا۔

Samina Riaz

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *