حیض کے دوران زیادہ درد سہنے والی خواتین کے لئے خاص

حیض کے دوران زیادہ درد سہنے والی خواتین کے لئے خاص

مہینے کے مخصوص ایام ہر لڑکی کے لئے ذہنی تناؤ اور جسمانی تکان کا باعث ہوتے ہیں۔ متعدد طبی فوائد رکھنے کے باوجود بعض خواتین کو حیض کے دوران برداشت سے زیادہ درد ہوتا ہے۔ اس کے نتیجے میں وہ بیماری کی سی کیفیات کا شکار ہو کر معمول کے کاموں میں مشکل محسوس کرتی ہیں۔

طبی ماہرین کا کہنا تھا کہ خواتین کا لاحق ہونے والا حیض کا درد دو طرح کا ہوتا ہے:

1 ۔ اجتماع خون کا ماہواری درد ۔
شادی شدہ عورتوں میں بچہ دانی کے اردگرد کے اعضاء میں ہونے والا یہ درد ماہواری سے تین چار دن قبل شروع ہوتا اور حیض شروع ہونے کے ساتھ خود ٹھیک ہو جاتا ہے۔ عمومی مشاہدے کے مطابق جو خواتین کم محنتی ہوتی ہیں انہیں یہ تکلیف زیادہ سہنی پڑتی ہے۔

2۔ عضلات کے سکڑنے کا ماہواری کا درد
کنواری لڑکیوں کو ہونے والا یہ درد بچے کی پیدائش تک رہتا ہے۔ اس درد کے دوران جی متلانا ، کپکپی اور قے آنے کی شکایات بھی ہو سکتی ہیں۔

طبی ماہرین اس بات پر یکسو ہیں کہ لڑکیوں یا شادی شدہ خواتین کو حیض کے دوران حد سے زیادہ درد ہونا بعض اوقات کسی خاص مسئلہ کی طرف اشارہ بھی ہو سکتا ہے۔ ان میں خون کی کمی، بچے دانی کا چھوٹا ہونا، تولیدی اعضاء کے تمام حصوں کا معمول کے مطابق کام نہ کرنا، ہارمونز کا توازن کھو دینا ،اعصابی کمزوری، سوڈیم، پوٹاشیم کا غذا میں توازن قائم نہ رہنا جیسے اسباب شامل ہیں۔

وہ خواتین جنھیں شروع سے ہی حیض کے دوران درد ہوتا ہے انھیں ہر دفعہ دافع درد دوائیں یا پین کلر کھانے سے اجتناب کرنا چاہئے لیکن وہ خواتین جنھیں اب حیض کے دوران درد کی شدت ذیادہ محسوس ہونے لگی ہو وہ کسی حل کو آزمانے سے قبل کسی مستند گائنی معالج سے ضرور رابطہ کریں۔

حیض کے دوران زیادہ درد سہنے والی خواتین کے لئے احتیاط

  • جن خواتین کو حیض کے درد کی شکایت ہو انھیں سرخ گوشت ،کیفین ،چٹپٹی چیزیں ،چاول اور سافٹ ڈرنکس (سوڈا اور ڈائیٹ دونوں) کا استعمال کم سے کم کرنا چاہئے۔
  • حیض کے دنوں میں چست اور تنگ کپڑے نہیں پہننے چاہئیں۔
  • حیض شروع ہونے کی تاریخ سے چار دن پہلے نمک کی مقدار کم کر دیں اور ہلکی پھلکی ورزش شروع کر دیں۔
  • خاص دنوں میں بہت زیادہ آرام کرنے سے یا مشقت کرنے سے بچنا چاہئے۔

حیض کے دوران زیادہ درد سہنے والی خواتین کے لئےغذائیں اور سپلیمنٹ

 گاجر کے بیج اور گڑ کا استعمال
ماہواری کے درد میں وٹامن اے ( گاجر ) کا استعمال مفید ہوتا ہے ۔دو چممچ گاجر کے بیج ایک چمچ گڑ ایک گلاس پانی میں ابال کر روزانہ صبح شام گرم کر کے پئیں ،تو اس سے ماہواری میں ہونے والا درد ٹھیک ہو جاتا ہے ۔

اجوائن
حیض کے دنوں میں ٹانگوں میں ہونے والی اینٹھن اور درد سے نجات کے لئے ایک گرم پانی کے ساتھ ایک چمچ اجوائن لیں۔

کیلشیم سپلیمنٹ کا استعمال
حیض کے دوران بے انتہا درد کا سامنا کرنے والی خواتین کو روزانہ کیلشیم اور میگنیشیم کا باقاعدہ استعمال کرنا چاہئے۔ یہ غذائی اجزا پٹھوں کو سکون دیتے ہیں۔ روزانہ 1000 ملی گرام کیلشیم اور 500 ملی گرام میگنیشیم سپلیمنٹ سے حیض کے درد کو کم کیا جا سکتا ہے۔ کیلشیم سپلیمنٹ کے استعمال سے دست کی شکایت ہو جائے انھیں کیلشیم کاربونیٹ کی جگہ کیلشیم سٹریٹ کا استعمال کرنا چاہئے۔

گرم پانی کا استعمال
کنواری لڑکیوں یا حیض کے دوران درد کی شکایت محسوس کرنی والی شادی شدہ خواتین کو زیادہ ٹھنڈے پانی کے استعمال سے مستقل پرہیز کرنا چاہئے ،ٹھنڈی غذاؤں اور ٹھندے پانی کے استعمال سے خون کے بہاؤ میں رکاوٹ پیدا ہوتی ہے جس سے درد میں اضافہ ہوتا ہے۔

یہ بھی دیکھیں: مرد، خوبصورت خواتین کا سامنا کیوں نہیں کر سکتے؟

جنہیں حیض کی قلت یا کثرت کے باعث درد ہو انھیں بادی ،ٹھنڈی غذاؤں اور ٹھنڈے پانی کا استعمال ترک کر دینا چاہئے ،پینے کے لئے سادہ یا ہلکا گرم پانی  استعمال کریں۔ نہانے کے لئے بھی گرم پانی استعمال کریں، اس سے نہانے سے پیٹ اور کمر میں ہونے والا درد ختم ہوتا ہے۔ گرم کپڑے سے سینکائی کرنے سے بھی حیض کے درد میں کمی آتی ہے۔

ایلوویرا اور مولی
ایلوویرا جیل کو باریک پیس کر اس میں ہم وزن شہد کی مقدار ملا کر پینے سے بھی حیض کے درد میں راحت ملتی ہے۔ مولی کے بیجوں کو پیس کر چار چار گرام صبح، دوپہر ارو شام گرم پانی سے پھانکنے سے ماہواری کھل کر آتی ہے اور درد ٹھیک ہو جاتا ہے۔

 مساج
ماہواری کے در میں پیٹ کے نچلے حصے میں اگر ہلکے گرم تیل ( لیونڈر یا زیتون کے تیل ) سے دونوں ہاتھوں سے گول دائرہ میں مالش کی جائے تو درد میں آرام آتا ہے۔

 پپیتے اور سونٹھ کا استعمال
آیورویدک میں پپیتے کو ماہواری کے دوران استعمال کرنا تجویز کیا جاتا ہے۔ پپیتے میں پپائن جز پایا جاتا ہے جو حیض کی رکاوٹ کو دور کر کے اخراج کو ہموار کرتا ہے نتیجتا درد سے فوری نجات مل سکتی ہے۔ کنواری لڑکیوں کو ماہواری میں درد ہوتا ہو انھیں سونٹھ اور گڑھ کا قہوہ بنا کر پینا چاہئے۔

 نیم کے پتے اور ادرک کا رس
اگر ماہواری کے دنوں میں ٹانگوں اور پیٹ میں درد ہو تو نیم کے پتے اور ادرک کا رس ملا کر پینے سے درد میں فوری آرام آ سکتا ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *