کم عمری سے ہی فحش فلمیں دیکھنے والے صنف نازک سے بیزار ہو جاتے ہیں

کم عمری سے ہی فحش فلمیں دیکھنے والے صنف نازک سے بیزار ہو جاتے ہیں

لنکولن: فحش مواد دیکھنا کسی بھی عمر میں اخلاقی اور ذہنی تنزلی کا سبب بنتا ہے مگر ایک نئی تحقیق کے مطابق جو نوجوان چھوٹی عمر سے ہی اس لت میں مبتلا ہو جاتے ہیں ان میں خواتین سے بیزاری اور نفرت پیدا ہو جاتی ہے۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام ہیلتھ ڈیسک کے مطابق یونیورسٹی آف نبراسکا کی ایک نئی تحقیق میں اس بات کا انکشاف کیا گیا ہے کہ چھوٹی عمر سے ہی فحش مواد دیکھنے والے نوجوان لڑکیوں اور خواتین سے بیزار ہو جاتے ہیں جس کی وجہ سے کئی طرح کے سماجی مسائل جنم لیتے ہیں۔

ریسرچ کے مطابق جو افراد تیس سال کے بعد فحش مواد دیکھنا شروع کرتے ہیں وہ اپنی ازدواجی زندگی سے مطمعن نہیں رہتے۔

نبراسکا یونیورسٹی کے ماہرین کا کہنا ہے کہ اس نئی تحقیق کا مقصد پورنو گرافی کے نوجوانی اور ادھیڑ عمری پر منفی اثرات کا جائزہ لینا ہے۔

ماہرین نے اس حوالے سے کی جانے والی تحقیق میں 17 سے 54 سال کے 330 افراد کو شامل کیا۔

ریسرچ کے مطابق فحش مواد دیکھنا ذہنی صحت کیلئے نقصان دہ ہے۔

ماہرین کا کہنا ہے کہ فحش مواد دیکھنے والے افراد میں خواتین پر جنسی لحاظ سے غلبہ پانے کی روش پیدا ہو جاتی ہے جو شادی شدہ افراد کی ازدواجی زندگی کو مسائل سے ہمکنار کرتی ہے جبکہ غیر شادی شدہ افراد کی اخلاقی تنزلی کا سبب بنتی ہے۔

یاد رہے کہ اس حوالے سے کی گئی ایک سابقہ تحقیق کے مطابق فحش مواد دیکھنے والے افراد دیگر لوگوں کے مقابلے میں بے چین اور غیر اطمعنان بخش زندگی گزارتے ہیں۔

 

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *