عمران خان کے خلاف قانونی جنگ نہیں لڑوں گی، گلالئی

عمران خان کے خلاف قانونی جنگ نہیں لڑوں گی، گلالئی

اسلام آباد: پاکستان تحریک انصاف کی سابق رہنما اور رکن قومی اسمبلی عائشہ گلالئی نے عمران خان کے خلاف قانونی جنگ نہ لڑنے کا اعلان کیا ہے۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کے مطابق نجی ٹی وی کے پروگرام “دوسرا رخ” میں میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ وہ عمران خان کے خلاف معاملہ عدالت لے کر جائیں گی اور نہ ہی کسی عدالت میں اس حوالے سے کسی مقدمے کی پیروی کریں گیں۔

عائشہ گلالئی کا کہنا تھا کہ وہ پریس کانفرنس کے ذریعے صرف معاملے کو سامنا لانا چاہتی تھیں اور میڈیا پر نہیں آنا چاہتی تھیں لیکن تحریک انصاف کے درباریوں نے ان کی پریس کانفرنس پر شدید ردعمل کیا اور ان کے پورے اہلخانہ کو نشانہ بنانا شروع کردیا جس کے بعد وہ میڈیا پر آئیں۔

انہوں نے کہا کہ میرے پاس نازیبا میسجز سے متعلق عمران خان کے خلاف ثبوت بھی موجود ہیں جب کہ نعیم الحق نے بھی کئی بار شادی کی پیش کش کی، پرویز خٹک کی کرپشن کے ثبوت بھی کسی اور ذرائع سے موجود ہیں۔

ایک سوال کے جواب میں گلالئی کا کہنا تھا کہ اگر عمران خان نے معافی مانگی تو میں ان کو کھلے دل سے معاف کردوں گی۔

معافی کے بعد تحریک انصاف میں شمولیت اور اس وقت کسی دوسری جماعت میں شمولیت کے سوال پر انہوں نے کہا کہ میرے پاس بہت سے آپشنز موجود ہیں تاہم اس وقت اپنی پڑھائی پر توجہ دے رہی ہوں اور مستبقل کے لائحہ عمل کا بعد میں اعلان کروں گی۔

ان کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کی مافیا کے خلاف میں اور میرے گھر والے بالکل تنہا ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ  لوگوں کو تحریک انصاف کی قیادت کے حوالے سے آگاہ میرا فرض تھا، پارٹی کی کئی خواتین نے آف دی ریکارڈ مجھ سے اس طرح کی شکایات کیں لیکن جب میں معاملہ سامنے لے کر آئی تو الٹا مجھے نشانہ بنایا گیا، تنقید کرنے والوں کو اس وقت پتہ لگے گا جب ان کی بہن بیٹی کے ساتھ خوانخواستہ اس طرح کا واقعہ پیش آئے گا۔

ایک اور سوال کے جواب میں انہوں نے کہا کہ عمران خان کے خلاف قانونی جنگ نہیں لڑوں گی اور نہ ہی کسی مقدمے کی پیروی کروں گی، اگر عمران خان اللہ اور اس قوم کی خواتین سے معافی مانگتے ہیں تو انہیں کھلے دل سے معاف کردوں گی۔

یاد رہے کہ چند روز قبل عائشہ گلالئی نے عمران خان پر سنگین الزامات عائد کرتے ہوئے تحریک انصاف سے مستعفی ہونے کا اعلان کیا تھا۔

انہوں نے عمران خان پر بد کردار ہونے کے ساتھ ساتھ مغربی کلچر کو فروغ دینے کے الزامات بھی عائد کیے تھے۔

دوسری جانب تحریک انصاف نے عائشہ گلالئی کے الزامات کو ن لیگ کی سازش قراردیتے ہوئے گلالئی پر پیسے لینے کے الزامات عائد کیے تھے جب کہ عمران خان پر تنقید کے بدلے ان کی بہن ماریہ طور پکئی سے متعلق بھی قابل اعتراض جملے کہے تھے۔

خیال رہے کہ ماریہ طور پکئی کا شمار پاکستانی کی صف اول کی اسکواش کھلاڑیوں میں کیا جاتا ہے اور ان پر تنقید کی بنیادی وجہ ان کے کھیل کے میدان کا لباس ہے۔

قابل ذکر بات یہ ہے کہ عائشہ گلالئی کی جانب سے الزامات کے بعد سیاسی اور عوامی حلقوں میں عام تاثر یہ پایا جارہا تھا کہ وہ چیئرمین تحریک انصاف کے خلاف عدالت سے رجوع کریں گی۔

گلالئی کے الزامات کی تحقیقات کے لیے قومی اسمبلی میں پارلیمانی کمیٹی بنانے کی قرارداد بھی منظور ہوچکی ہے جس کا تحریک انصاف کی جانب سے خیر مقدم بھی کیا گیا ہے۔

قرارداد کی منظوری کے بعد اسپیکر ایاز صادق ایک کمیٹی تشکیل دیں گے جو کہ الزامات کی تحقیقات کرتے ہوئے ایک ماہ کے اندر قومی اسمبلی میں رپورٹ جمع کرائے گی تاہم گلالئی کے اس اعلان کے بعد اب تحقیقات کا معاملہ خال خال ہی نظر آتا ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *