گلالئی کے الزامات کی تحقیقات کے لیے کمیٹی بنانے کی تحریک منظور

گلالئی کے الزامات کی تحقیقات کے لیے کمیٹی بنانے کی تحریک منظور

اسلام آباد:پاکستان کے قانون ساز ادارے ایوان زیریں یعنی قومی اسمبلی نے عائشہ گلالئی کے الزامات کی تحقیقات کیلئے پارلیمانی کمیٹی بنانے کی تحریک مںظور کرلی۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کے مطابق خصوصی پارلیمانی کمیٹی کے قیام کے تحریک ن لیگ کی عارفہ خالد نےپیش کی۔

تحریک کے مطابق گلالئی کے الزامات کی تحقیقات کیلئے پارلیمانی کمیٹی اسپیکرقومی اسمبلی ایازصادق تشکیل دیں گے جو کہایک ماہ میں تحقیقات مکمل کرکےرپورٹ پیش کرےگی،۔

قبل ازیں عائشہ گلالئی قومی اسمبلی کے اجلاس  میں  پہنچیں تو ان کے الزامات پر اظہار خیال کا سلسلہ شروع ہوا۔

ن کی خاتون رکنی اسمبلی ماروی میمن نے کہا ہے کہ حلفاً کہہ رہی ہوں کہ عائشہ گلالئی کے الزامات درست ہیں. اظہار خیال کرتے ہوئے ماروی میمن کا کہنا تھا کہ تحریک انصاف کی جوخواتین عائشہ کے خلاف بات کررہی ہیں وہ بھی جانتی ہیں کہ جو کہہ رہی ہیں وہ 100 فیصد درست ہے۔

انہوں نے کہا کہ عائشہ گلالئی نے جرات کا مظاہرہ کیا ہے جس پر اسے خراج تحسین پیش کرتی ہوں، انہوں نے خاموشی توڑ کر دوسری خواتین کو آوازدی۔ لیکن تحریک انصاف کی جوخواتین چپ ہیں وہ اپنی نشستیں اور سیاست بچانے کے لیے خاموش ہیں۔

اس موقع پر تحریک انصاف کی رکن اسمبلی شیریں مزاری اور دیگر خواتین نے احتجاج کیا اور کہا کہ انہیں بھی بولنے کا موقع دیا جائے جس پر ماروی میمن کا کہنا تھا کہ ابھی تو بات شروع ہوئی ہے اور بہت دور تک جائے گی۔

ماروی میمن کی تقریر کے دوران حکومتی اور پیپلزپارٹی کی نشستوں پر بیٹھی خواتین نے عمران خان کے خلاف شیم شیم نعرے بھی لگائے۔

قبل ازیں پی پی کی شگفتہ جمانی کا کہنا تھا کہ واقعے کی تحقیقات ہونی چاہئیے چاہے سپریم کورٹ کرے یا پھر پارلیمانی کمیٹی۔

انہوں نے کہا کہ باقی الزامات کی تحقیقات ہوسکتی ہے اور جے آئی ٹی بن سکتی ہے تو اس معاملے پر کیوں نہیں؟ عائشہ پر تیزاب پھنکنے کی دھمکیاں دی جارہی ہیں۔

انہوں نے مزید کہا کہ گلالئی کے ساتھ پیش آنے والے واقعات خواتین کے خلاف سازش ہے اور اس سے سیاست میں خواتین کی شرکت متاثر ہوگی۔

بعد ازاں اظہار خیال کرتے ہوئے شیریں مزاری کا کہنا تھا کہ اگر کمیٹی بنانے ہے تو خواجہ آصف کے خلاف بناؤ، کیا بھول گئے کہ انہوں نے مجھے گالی دی تھی۔

انہوں نے مزید کہا کہ میرے ساتھ جب برا ہوا تو ن لیگی خواتین خاموش تھیں اور اب انہیں شرم و حیا آگئی، ان کا کہنا تھا کہ عائشہ گلالئی کے پاس ثبوت ہیں تو وہ عدالت چلی جائیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *