مجھے یا میری بہن کو کچھ ہوا تو ذمہ دار عمران خان ہوں گے

مجھے یا میری بہن کو کچھ ہوا تو ذمہ دار عمران خان ہوں گے

اسلام آباد : تحریک انصاف کے چیئرمین عمران خان پر سنگین الزامات عائد کر نے والی رکن قومی اسمبلی عائشہ گلالئی نے کہاہے کہ عمران خان نے مجھے تنہائی میں ملنے کا کہا ۔

نجی ٹی وی کے پروگرام میں میزبان سے گفتگو کرتے ہوئے عائشہ گلالئی کا کہنا تھا کہ عمران خان مجھے شادی کا اشارہ دیتے تھے اور بیہودہ میسجزکرتے تھے۔

انہوں نے کہا کہ 2013ء میں مجھے چیئرمین پی ٹی آئی کے بیہودہ میسجز آنے لگے جس پر میں اپنے والے اور بھائی کو ان کے پاس لے کر گئی تو وہ ادھر ادھر کی باتیں کرنے لگ گئے۔

گلالئی کے مطابق عمران خان نے مجھے کہا کہ میں آپ کو بلیک بیری تحفے میں دینا چاہتا ہوں لیکن میں نے انکار کیا، عمران خان ذاتی نمبر سے میسج کرتے تھے اور اس کا مکمل ریکارڈ موجود ہے، شرم کی وجہ سے پہلے یہ سب نہیں بتا پارہی تھی اب ہمت کرکے معاملہ سامنے لائی ہوں۔ عمران خان اس بات سے انکار نہیں کرسکتے کہ انہوں نے مجھے نازیبا میجسز کیے۔

خاتون رکن اسمبلی کا کہنا تھا کہ جب میں ہمت کرکے معاملات کو سامنے لے آئی ہوں تو تحریک انصاف کے رہنما اور کارکنان میرے والد اور میری بہن پر حملے کرکے اپنی گندی ذہنیت کو واضح کررہے ہیں، اگر مجھے یا میری فیملی کو کچھ ہوا تو ذمہ دار صرف اور صرف عمران خان ہوں گے۔

ان کے بقول میں کسی سیاسی جماعت کے کہنے پر کیوں اپنے اوپر الزامات لوں گی، عمران خان نے جب وزیرستان مارچ کا اعلان کیا تو میں نے ان کا ساتھ دیا۔

انہوں نے کہا کہ مجھے یہ نشست پی ٹی آئی نے نہیں بلکہ میں نے پی ٹی آئی کو دی ہے، بے نظیر بھٹو نے مجھے بیٹی کہا اور  مخصوص نشست کے لیے منتخب کیا۔

انہوں نے مزید کہا کہ عمران خان کی وجہ سے قومی اسمبلی کی نشست چھوڑوں گی اور نہ ہی سیاست چھوڑوں گی۔

پروگرام میں شریک خاتون سینیٹر ستار ایاز کا کہنا تھا کہ اگر عائشہ گلالئی کے الزامات درست ہیں تو ہم ان کے ساتھ ہیں۔

انہوں نے کہا کہ تین چار روز سے جو باتیں چینلز پر چل رہی ہیں وہ انتہائی افسوس ناک ہیں، معاملات کو جذبات کے بجائے قانونی طریقہ کار سے حل کیا جائے۔

انہوں نے کہا کہ عائشہ گلالئی کے الزامات کی تحقیقات ہونی چاہیئے، اسپیکر اسمبلی بھی معاملے کی تحقیقات کے لیے کمیٹی تشکیل دے سکتے ہیں، ان کا کہنا تھا کہ گلالئی کا معاملہ دب گیا تو یہ سلسلا چل نکلے گا۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *