پارلیمنٹ ٹیکس ڈائریکٹری: کس پاکستانی سینیٹر نے کتنا ٹیکس ادا کیا؟

پارلیمنٹ ٹیکس ڈائریکٹری: کس پاکستانی سینیٹر نے کتنا ٹیکس ادا کیا؟

اسلام آباد: پاکستان میں آمدن و ٹیکسوں کے متعلق سرکاری ادارے فیڈرل بورڈ آف ریونیو (ایف بی آر) کی جاری کردہ پارلیمنٹ ٹیکس ڈائریکٹری برائے مالی سال 2016 یہ بھی بتاتی ہے کہ کس پاکستانی سینیٹر نے کتنا ٹیکس ادا کیا۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کو دستیاب تفصیلات کے مطابق پارلیمنٹ ٹیکس ڈائریکٹری برائے مالی سال 2016ء کے مطابق سب سے سنیٹر جہانزیب جمال دینی (بلوچستان( نے سب سے کم صرف 4451 روپے کا ٹیکس جمع کرایا۔

سب سے زیادہ ٹیکس جمع کرانے والوں میں سنیٹر روزی خان کاکڑ، تاج محمد آفریدی اور محمد طلحہ محمود ہیں جنہوں نے بالترتیب 4کروڑ 99لاکھ 23ہزار 783روپے‘ 3کروڑ 52لاکھ 84ہزار 413روپے اور 3کروڑ 24لاکھ 95ہزار 268روپے کا ٹیکس ادا کیا۔

ذیل میں سب سے کم ٹیکس جمع کروانے والے کے نام، علاقے اور جمع کردہ ٹیکس کی تفصیلات دی جا رہی ہیں:

کس پاکستانی سینیٹر نے کتنا ٹیکس؟

سندھ سے ڈاکٹر محمد فروغ نسیم 2کروڑ 2لاکھ 33ہزار 725روپے، پنجاب سے اعتزاز احسن نے ایک کروڑ 38لاکھ 54ہزار 833روپے ٹیکس ادا کیا۔

خیبر پختونخوا سے محسن عزیز نے 88لاکھ 96ہزار بارہ روپے، سندھ سے فاروق حمید نائیک نے 78لاکھ 51ہزار بارہ روپے، فاٹا سے سجاد حسین نے 58لاکھ 77ہزار 912روپے، پنجاب سے ظہیر الدین بابر اعوان نے 55لاکھ 76ہزار 832روپے، بلوچستان سے میر کبیر احمد نے 54لاکھ 97ہزار 855روپے، پنجاب سے محمد اسحاق ڈار نے 46لاکھ 17ہزار 328روپے، بلوچستان کے محمد یوسف نے 32لاکھ 42ہزار 540روپے، پنجاب سے سعود مجید نے 29لاکھ 35ہزار 210روپے، فیڈرل ایریا سے عثمان سیف اللہ خان نے 22لاکھ 46ہزار 416روپے، بلوچستان سے اشوک کمار نے 20لاکھ 69ہزار 899روپے، خیبر پختونخوا سے شاہی سید نے 19لاکھ 30ہزار 367روپے ٹیکس ادا کیا۔

پنجاب سے لیفٹیننٹ جنرل (ر) عبدالقیوم نے 16لاکھ 50ہزار 273روپے، چوہدری تنویر خان نے 16لاکھ 43ہزار 604روپے، نذہت صادق نے 14لاکھ 78ہزار 588روپے، سندھ سے سلیم مانڈوی والا نے 13لاکھ 47ہزار 362روپے، شیری رحمان نے 10لاکھ 26ہزار 892روپے، اصلاح الدین شیخ نے 10لاکھ 262روپے، خیبر پختونخوا سے الیاس احمد بلور نے 9لاکھ 44ہزار 667روپے، سندھ سے خوش بخت شجاعت نے 7لاکھ 94ہزار 764روپے، خیبر پختونخوا سے نعمان وزیر نے 7لاکھ 59ہزار 036روپے، بلوچستان سے محمد یوسف نے 7لاکھ 3ہزار 764روپے، پنجاب سے عائشہ رضا فاروقی نے 6لاکھ 32ہزار 709روپے، خیبر پختونخوا سے فرحت اللہ بابر نے 5لاکھ 33ہزار 677روپے ٹیکس ادا کیا۔

یہ بھی دیکھیں: وزیراعظم آزاد کشمیر کا پاکستان مخالف بیان، اصل کہانی کھل گئی

سندھ سے چئیرمین سینیٹ، میاں رضا ربانی نے 4لاکھ 92ہزار 201روپے، فاٹا سے ملک نجم الحسن نے 4لاکھ 78ہزار 059روپے، سندھ سے محمد عتیق شاہ نے 4لاکھ 67ہزار 539روپے، فاٹا سے مومن خان نے 4لاکھ 38ہزار 726روپے، خیبر پختونخوا سے لیاقت خان نے 4لاکھ 29ہزار 399روپے ٹیکس ادا کیا۔

پنجاب سے سید محمد نہال ہاشمی نے 4لاکھ 24ہزار 941روپے، بلوچستان سے مولانا عبدالغفور حیدری نے 4لاکھ 17ہزار 404روپے، بلوچستان سے سردار فتح محمد حسینی نے 4لاکھ 202روپے، خیبر پختونخوا سے صلاح الدین ترمذی نے 3لاکھ 73ہزار 870روپے، بلوچستان سے میر اسرار اللہ خان زہری نے 3لاکھ 64ہزار 798روپے، فاٹا سے ہدایت اللہ نے 3لاکھ 23ہزار 838روپے، پنجاب سے غوث محمد خان نیازی نے 2لاکھ 46ہزار 903روپے، پنجاب سے سردار ذوالفقار علی خان کھوسہ نے 2لاکھ 45ہزار 933روپے ٹیکس ادا کیا۔

اسی طرح خیبر پختونخوا سے محمد جاوید عباسی نے 2لاکھ 25ہزار 691روپے، سندھ سے کرنل (ر) سید طاہر حسین مشہدی نے 2لاکھ 14ہزار 767روپے، پنجاب سے پروفیسر ساجد میر نے 2لاکھ 3ہزار 314روپے، بلوچستان سے ایڈووکیٹ محمد دائود خان اچکزئی نے 1لاکھ 99ہزار 680روپے، پنجاب سے کامران مائیکل نے 1لاکھ 90ہزار 451روپے ٹیکس جمع کرایا۔

سندھ سے محمد علی سیف نے ایک لاکھ 84ہزار 578روپے، سندھ سے سید مظفر حسین شاہ نے ایک لاکھ 49ہزار 667روپے، پنجاب سے پرویز رشید نے ایک لاکھ 37ہزار 271روپے ٹیکس جمع کرایا۔

سینیٹ میں قائد حزب اختلاف راجہ محمد ظفر الحق نے ایک لاکھ 34ہزار 039روپے، خیبر پختونخوا سے محمد اعظم خان سواتی نے ایک لاکھ 23ہزار 861روپے، سندھ سے گیان چند نے ایک لاکھ گیارہ ہزار 171روپے، فیڈرل ایریا سے ڈاکٹر راحیلہ گل مگسی نے ایک لاکھ 2ہزار 881روپے، سندھ سے سعید غنی نے 99ہزار 840روپے ٹیکس جمع کرایا۔

خیبر پختونخوا سے جان کینتھ ولیمز نے 74ہزار 441روپے، سندھ سے کریم احمد خواجہ نے 62ہزار 895روپے، خیبر پختونخوا سے سید شبلی فراز نے 55ہزار 448روپے، حاجی سیف اللہ خان بنگش نے 54ہزار 040روپے، فیڈرل ایریا سے مشاہد حسین سید نے 51ہزار 328روپے، خیبر پختونخوا سے باز محمد خان نے 50ہزار 351روپے، بلوچستان سے حافظ حمداللہ نے 50ہزار 181روپے، محمد عثمان خان کاکڑ نے 50ہزار 181روپے،  شہباز خان درانی نے 50ہزار 181روپے، پنجاب سے کامل علی آغا نے 50ہزار 181روپے، سندھ سے نسرین جلیل نے 50ہزار 181روپے، سسی پلیجو نے 40ہزار 018روپے، بلوچستان سے سعیدالحسن مندوخیل نے 35ہزار 241روپے ٹیکس ادا کیا۔

سندھ سے مختار احمد دھامرہ عاجز نے 34ہزار 947روپے،  بلوچستان سے میر نعمت اللہ زہری نے 34ہزار 941روپے،  نسیمہ احسن نے 34ہزار 941روپے، صاحبزادہ سیف اللہ مگسی نے 34ہزار 941روپے، خیبر پختونخوا سے نثار محمد نے 34ہزار 941روپے، روبینہ خالد نے 34ہزار 941روپے،  خیبر پختونخوا سے جماعت اسلامی کے سربراہ سراج الحق نے 34ہزار 941روپے ٹیکس ادا کیا۔

پنجاب سے خالدہ پروین نے 34ہزار 941روپے، سندھ سے سحر کامران نے 34ہزار 941روپے، بلوچستان سے سردار محمد اعظم نے 25ہزار 341روپے، پنجاب سے محمد محسن خان لغاری نے 24ہزار 941روپے، خیبر پختونخوا سے ستارہ ایاز نے 24ہزار 621روپے، پنجاب سے حمزہ نے 24ہزار 443روپے، سندھ سے نگہت مرزا نے 20ہزار 965روپے ٹیکس جمع کرایا۔

سندھ سے سابق وزیرداخلہ عبدالرحمان ملک نے 19ہزار 076روپے، پنجاب سے نجمہ حمید نے 18ہزار 083روپے، بلوچستان سے مفتی عبدالستار نے 17ہزار 470روپے، پنجاب سے محمد ظفر اللہ خان دھاندلا نے 17ہزار 470روپے، سلیم ضیاء نے 17ہزار 470روپے، ہری رام 17ہزار 470روپے، بلوچستان سے کلثوم پروین نے 13ہزار 021روپے، پنجاب سے مشاہد اللہ خان نے 11ہزار 313روپے ٹیکس دیا۔

فیڈرل ایریا سے سردار محمد یعقوب خان ناصر نے 6ہزار 987روپے، خیبر پختونخوا سے خانزادہ خان نے 5ہزار 460روپے اور بلوچستان سے جہانزیب جمال دینی نے 4ہزار 451روپے سالانہ ٹیکس ادا کیا۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *