حکومت نے جے آئی ٹی رپورٹ مسترد کردی

حکومت نے جے آئی ٹی رپورٹ مسترد کردی

اسلام آباد: پاناما کیس پر عملدرآمد کے لئے قائم سپریم کورٹ کے خصوصی بینچ میں پیر کو جے آئی ٹی رپورٹ پیش کئے جانے پر ردعمل دیتے ہوئے ن لیگ نے اسے مسترد کرنے کا فیصلہ کیا ہے۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کے نمائندہ کے مطابق ن لیگی قیادت کے قریبی ذرائع کا کہنا ہے کہ پیر کو وزیراعظم کی صدارت میں خصوصی مشاورتی اجلاس ہوا جس میں رپورٹ کے خلاف ردعمل طے کیا گیا۔

حکومت کی جانب سے تاحال باقاعدہ طور پر ردعمل کے متعلق کوئی اطلاع جاری نہیں کی گئی البتہ ذرائع کا کہنا ہے کہ پاناما کیس کی تحقیقات کے لئے قائم کردہ جے آئی ٹی کی رپورٹ کو مسترد کرنا طے پایا ہے۔

پیر کو وزیراعظم ہائوس میں ہونے والے خصوصی اجلاس کے متعلق ذرائع کا کہنا ہے کہ اس میں خواجہ آصف، خواجہ سعد رفیق، عرفان صدیقی سمیت دیگر رہنما شامل تھے۔

قبل ازیں جے آئی ٹی رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ منی ٹریل جعلی ثابت ہو گئی ہے۔ اس میں شریف خاندان کی تین مزید آف شور کمپنیوں کا انکشاف بھی کیا گیا تھا۔

سپریم کورٹ کے حکم پر بننے والے جے آئی ٹی نے اس بات کا انکشاف بھی کیا تھا کہ وزیراعظم اور ان کے بیٹوں کے اعلان کردہ اثاثوں کی نسبت ان کے پاس موجود دولت کہیں زیادہ ہے۔

جے آئی ٹی رپورٹ میں کارروائی کیلئے نیب قوانین کا حوالہ دیتے ہوئے انہی کے تحت معاملہ آگے بڑھانے کی سفارش کی گئی تھی۔ یہ بھی کہا گیا تھا کہ نیلسن اور نیسکول کمپنیز کی بینیفشل مالکہ مریم نواز ہی ہیں۔

یاد رہے کہ سپریم کورٹ آف پاکستا ن نے آئندہ سماعت کے لئے پیر کا دن مقرر کرتے ہوئے 10 جلدو ں پر مشتمل جے آئی ٹی کی 9 جلدیں فریقین کو فراہم کرنے کا حکم دیا تھا۔

جے آئی ٹی رپورٹ پیش کئے جانے کے موقع پر عدالت عظمی نے نجی میڈیا گروپ جنگ کو توہین عدالت کا نوٹس جاری کرتے ہوئے 7 روز میں جواب طلب کیا تھا۔

دریں اثنا ایف آئی اے کی رپورٹ پر کارروائی کرتے ہوئے سیکیورٹی اینڈ ایکسچینج کمیشن کے چئیرمین کو شریف خاندان کے مالیاتی ریکارڈ میں ٹیمپرنگ کا ملزم ٹھہرا کر مقدمہ درج کرنے کا حکم بھی دیا تھا۔

سپریم کورٹ کے ججز نے اپنے ریمارکس میں جنگ گروپ کے ایک صحافی کے رویے پر تنقید کرتے ہوئے اسے توہین عدالت قرار دیا تھا۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *