براون رائس خطرناک بیماریوں سے بچائے

براون رائس خطرناک بیماریوں سے بچائے

نیویارک: چاول جب کاشت کیے جاتے ہیں تو ان پر براؤن چھلکے ہوتے ہیں، جنہیں رائس ملز میں پالش کرکے اتار جاتا ہے اور اس عمل کے دوران چاول جہاں سفید ہوجاتے ہیں،وہیں چاول کی کئی غذائی خصوصیات بھی نکل جاتی ہیں۔

پاکستان ٹرائب ہیلتھ ڈیسک کے مطابق  امریکن کلینکل اینڈ جرنل نیوٹریشن کی ایک تحقیق  میں بتایا گیا ہے کہ چاول کی سیلر یا بڑی مشینوں میں صفائی کے دوران جہاں ان کے چھلکے اتر جاتے ہیں، وہیں ان میں نیوٹریشن،فائبر اور دیگر خصوصیات بھی نکل جاتی ہیں۔

رپورٹ میں کہا گیا کہ براؤن اور سفید قسم کے چاول میں سے کوئی بھی چاول نقصان دہ نہیں ہے تاہم اگر مکمل غذائیت والے چاول کھائے جائیں تو یہ امراض قلب،کولیسٹرول،ذیابیطس اور فالج جیسے امراض سے حفاظت کرتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق غذائیت سے بھرپور چاول سے مراد ہرگز یہ نہیں کہ چھلکے والے چاول کھائے جائیں تاہم اس سے مراد ہے کہ چاول کو ایسی مشینوں کے ذریعے صاف کرایا جائے،جو صرف ان کے چھلکے اتاریں۔

سیلر جیسی بڑی مشینیں چاول کو پتلا اور خوبصورت بنانے کے چکر میں ان کی غذائیت ہی کھینچ لیتی ہیں۔

امریکی محکمہ زراعت و خوراک کے تحقیقاتی ادارے کے مطابق بڑی مشینوں میں چاول کی صفائی کرانے سے پروٹین،فائبر،انرجی،کیلشیم،کاربوہائیڈریٹس جیسے اثرات کم ہوجاتے ہیں۔

رپورٹ کے مطابق جو چاول براؤن ہوتے ہیں،انہیں مشینں کم رگڑتی ہیں،اس لیے ان میں زیادہ طاقت ہوتی ہے،جو کئی حوالے سے بہتر ہوتے ہیں۔

ماہرین کے مطابق براؤن چاول میں سفید چاول کے مقابلے انرجی 10 کیلوریز تک زائد ہوتی جب کہ ان میں فائبر 3 گرام،پروٹین ایک گرام، سوڈیم 20 گرام اور کیلشیم کی مقدار بھی زیادہ ہوتی ہے۔

ماہرین نے مشورہ دیا ہے کہ سفید اور پالش ہوئے چاول کے مقابلے براؤن یا پھر کم پالش والے چاول کھائے جائیں۔

 

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *