پنجاب اسمبلی میں بجٹ تقریر کے دوران گو نواز گو کے نعرے لگ گئے

پنجاب اسمبلی میں بجٹ تقریر کے دوران گو نواز گو کے نعرے لگ گئے

لاہور:پنجاب حکومت نے مالی سال 2017-18 کے بجٹ میں ملازمین کی تنخواہوں اور پنشن میں 10 فیصد اضافہ تجویز کیا ہے جبکہ خود روزگار سکیم سے 6 لاکھ 70 ہزار افراد کو قرض دینے کی تجویز بھی دی گئی ہے۔

پاکستان ٹرائب ڈاٹ کام کو موصول ہونے والی اطلاعات کے مطابق پنجاب حکومت کی جانب سے پیش کیے جانے والے بجٹ میں سکول ایجوکیشن کیلئے 68 ارب 65 کروڑ روپے مختص کئے گئے ہیں جبکہ ہائر ایجوکیشن کے لئے 44 ارب 61 کروڑ روپے مختص کئے جا رہے ہیں۔

علاوہ ازیں بجٹ میں پرائمری اینڈ سیکنڈری ہیلتھ کیئر کے لئے 51 ارب 33 کروڑ روپے رکھے گئے ہیں اور سپیشلائزڈ ہیلتھ کیئر اینڈ میڈیکل ایجوکیشن کے لئے 108 ارب 63 کروڑ رکھے گئے ہیں۔

وزیر خزانہ ڈاکٹر عائشہ نے بجٹ تقریر کرتے ہوئے کہا کہ وزیراعظم نواز شریف کی قیادت میں مسلم لیگ (ن) کی حکومت کی جانب سے کئے گئے اقدامات کے باعث پاکستان کا شمار دنیا کی ابھرتی ہوئی مارکیٹ میں ہو رہا ہے۔ سی پیک کا پروگرام وزیراعظم محمد نواز شریف کی قیادت میں پاک، چین دوستی کی سب سے بڑی زندہ علامت بن کر سامنے آئی ہے۔ یہ پروگرام پاکستان کی معاشی ترقی کیلئے گیم چینجر کی حیثیت رکھتا ہے۔

انہوں نے کہا کہ میں سمجھتی ہوں کہ سی پیک کا ذکر کرتے ہوئے معاہدے کی تکمیل میں وزیراعلیٰ پنجاب شہباز شریف کا موثر،متوازن اور نتیجہ خیز کوشش کا ذکر نہ کرنا ناانصافی ہو گا۔

یاد رہے سپیکر پنجاب اسمبلی رانا محمد اقبال کی زیر صدارت اجلاس میں وزیر خزانہ ڈاکٹر عائشہ نے بجٹ پیش کیا جن کی تقریر کے دوران اپوزیشن اراکین کی جانب سے ”جھوٹ ہے، جھوٹ ہے“ اور ”گو نواز گو“ کے نعرے لگائے جاتے رہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *