سانپ کے کاٹنے پر حفاظتی تدابیر

سانپ کے کاٹنے پر حفاظتی تدابیر

ادیس ابابا: دنیامیں سانپوں کی 3 ہزار سے زائد اقسام پائی جاتی ہیں جن میں سے 10فیصد خطرناک حد تک زہریلی ہیں،یہ سانپ دنیا بھر میں پائے جاتے ہیں لہٰذا جن علاقوں میں سانپ زیادہ پائے جاتے ہیں وہاں پتھریلی چٹانوں یا جھاڑیوں وغیرہ میں سے گزرتے ہوئے بے حد احتیاط کرنی چاہیے۔

ماہرین کے مطابق  بدقسمتی سے اگر کسی کو سانپ کاٹ لے تو پھر اسے یہ ضرور معلوم ہونا چاہیے کہ ایسی صورتحال میں جان بچانے کے لئے کیا کرنا چاہئیے۔

پہلی بات تو یہ ہے کہ سانپ کے کاٹنے کی صورت میں انسان پر خوف کا شدید حملہ ہوتا ہے لیکن ایسی صور ت میں زیادہ سے زیادہ پر سکون رہنے کی کوشش کرنی چاہیے۔

 اگر آپ کیلئے ممکن ہو سکے تو سب سے پہلے یہ دیکھیں کہ سانپ کی جلد کی رنگت کیسی ہے۔

عموماً رنگت جتنی چمکدار ہوتی ہے سانپ اتنا ہی زیادہ زہریلا ہوتا ہے،سانپ کی جلد کی رنگت کے علاوہ اس کی جسامت اور اس کے جسم پر بنی دھاریوں یا ڈبیوں وغیرہ کو بھی ضرور نوٹ کریں کیونکہ یہ باتیں علاج میں مددگار ثابت ہونگی ۔

جس جگہ سانپ نے کاٹا ہو وہاں سے لباس ہٹا دیں،مثال کے طورپر جرسی ، جوتا یا کپڑے وغیرے ہٹا دیں۔

زخم کو پانی سے صاف کریں اور اس کے اوپر نرمی سے پٹی باندھ دیں،زخم پر برف لگانے یا اس میں سے خون کھینچنے جیسا کام نہ کریں۔

اب جلد ازجلد کسی ہسپتال میں پہنچنے کی کوشش کریں،اس دوران متاثرہ حصے کو حرکت نہ دیں اور اس حصے کو اپنے دل کی سطح سے نیچے رکھیں تا کہ زہر سارے جسم میں نہ پھیلے۔

 

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *