گھٹنوں سے آوازیں جوڑوں کے امراض کا پیش خیمہ

گھٹنوں سے آوازیں جوڑوں کے امراض کا پیش خیمہ

نیویارک: کیا گھٹنے مڑتے ہوئے چٹخنے یا کسی قسم کی آواز ہوتی ہے ؟اگر ہاں تو یہ جوڑوں کے امراض کا خطرہ بڑھانے والی علامت ہوسکتی ہے۔

پاکستان ٹرائب ہیلتھ ڈیسک کے مطابق امریکی ماہرین نے اپنی ایک رپورٹ میں بتایا ہے کہ کولہے،گھٹنے اور انگوٹھوں کے جوڑوں میں درد کا باعث بننے والے اس درد کا شکار لوگ اس وقت ہوتے ہیں جب ہڈیوں کے سرے میں موجود لچکدار ٹشوز کو نقصان پہنچے۔

بیلور کالج آف میڈیسین کی تحقیق کے دوران ساڑھے تین ہزار کے لگ بھگ ایسے افراد کا جائزہ لیا گیا جو کہ گھٹنوں کے جوڑوں کے درد کے مرض کے خطرے سے دوچار تھے۔

نتائج سے معلوم ہوا کہ گھٹنوں کے جوڑ سے چٹخنے یا کسی قسم کی کرخت آواز اس تکلیف دہ مرض کی ابتدائی نشانی ہوتی ہے جو کہ اس کے خطرے کو ظاہر کرتی ہے۔

ماہرین نے یہ بھی دریافت کیا کہ جن لوگوں میں ایک سال کے اندر یہ مرض ابھرتا ہے، ان میں سے 75 فیصد علامات ریڈیو گرافک تصاویر میں تو نظر آجاتی ہیں مگر لوگوں کو اکثر گھنٹوں میں تکلیف نہیں ہوتی۔

انہوں نے مشورہ دیا کہ اگر گھٹنوں میں چٹخنے یا کسی قسم کی آوازیں آتی ہیں تو یہ اس بات کی علامت ہے کہ آئندہ ایک برس کے دوران وہ جوڑوں کے امراض کا شکار ہوسکتے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ ایکسرے میں تو لوگوں میں اس کی علامات نظر آجاتی ہیں مگر ضروری نہیں مریض درد کی شکایت کرے۔

اس حوالے سے مزید تحقیق کرکے بھی جانا جائے گا کہ آخر ایکسرے میں علامات نظر آنے کے باوجود انہیں تکلیف کیوں نہیں ہوتی مگر گھٹنے کیوں چٹختے ہیں،جس سے مستقبل میں گھٹنوں کے جوڑوں کے امراض کی موثر روک تھام کی جاسکے گی۔

 

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *