اس بارسراج الحق کیوں نہیں؟ ۔ زبیر منصوری

اس بارسراج الحق کیوں نہیں؟ ۔ زبیر منصوری

وہ پورے عزم کے ساتھ کہتا ہے !

میں تعلیم کو تبدیلی کا ذریعہ بنا کر رہوں گا

وہ کہتا ہے!

“اسکول مرکز تبدیلی” بن جائیں گے،

“ہر بچہ ہر صلاحیت “میرا مشن ہے میں یہ کر کے رہوں گا

وہ کہتا ہے !

دیکھو میں خود ٹیچر رہا ہوں،میری ساتھیوں کےہزاروں اسکولوں،کالجوں مدرسوں اور یونی ورسٹیز میں آج بھی لاکھوں بچے پڑھتے ہیں میرے لوگوں کی ایک ایک چین چھ چھ سو اسکولوں پر مشتمل ہے اور ایسی کئی چینز ہیں تم مجھ پر اعتماد کر سکتے ہو،میرے لوگوں کے تجربے پر بھروسہ کر سکتے ہو۔

وہ پورے یقین سے کہتا ہے !

میرے لوگوں کے اسکولز ملک بھر میں ٹاپ کرتے ہیں

مگر پھروہ بہت دکھ سے کہتا ہے ہمارا نظام تعلیم ہر سال لاکھوں بے روز گار پیدا کر رہا ہے،مجھے موقع ملا تو میں اسےبدل دوں گا

وہ کہتا ہے دیکھو!

میرے پاس بچوں کی تعلیم اور تربیت کے جدید ترین ٹولز اور ٹیکنیکس کے ماہرین موجود ہیں میرے پاس ایسے ہزاروں بے لوث لوگ ہیں جن کے لئے تعلیم معاش نہیں مشن ہےمیرے ادارے ہر سال کروڑوں روپے جمع کرتے ہیں ایک ایک روپیہ تعلیم پر خرچ کر تے ہیں اور آڈٹ کرواتے ہیں۔

وہ کہتا ہے !

میں اگر آج یہ سب کر سکتا ہوں تو سوچو کل اگر حکومت واختیار مجھے ملا تو میں کیا نہیں کر سکتا؟

وہ درد مندی سے کہتا ہے!

دیکھو میں تمہارے بچوں کے لئے سوچتا ہوں،میں تم ہی میں سے ہوں میرے بچے تمہارے بچوں جیسے اسکولوں میں پڑھتے ہیں۔

میں تم سے وعدہ کرتا ہوں میں تمہارے پانچ سو بہترین پی ایچ ڈیز بٹھا کرتعلیم کا پچاس سالہ منصوبہ بنواؤں گا اور ایسی قانون سازی کر جاؤں گا کہ پھر کوئی اسے بدل نہ سکے تعلیم گھڑیال کی سوئی کی طرح خود کار طریقے سے بس مسلسل آگے بڑھے گی۔

وہ یہاں رکا لمحے بھر کو اس نے دور آسمان کی وسعتوں میں جھانکا اور پھر سامنے موجود لوگوں سے مخاطب ہوا اور بولا ” تم دیکھنا ایک دن وہ بھی آئے گا جب امریکا اور سعودی عرب سے علم کے پیاسے تمہارے ائیرپورٹس پر اتریں گے۔”

اس کا ماضی کہتا ہے وہ ایماندار ہے

وہ جھوٹا اور فریبی نہیں

وہ اپنی ذات کے خول میں بند نہیں رہتا وہ اپنے لوگوں کے لئے سوچتا ہی نہیں بے قرار رہتا ہے

تو پھر زرداریوں اور شریفوں کو آزمانے والو اس بار سراج الحق ہی کیوں نہیں؟؟؟

(مسلم یونی ورسٹی اضا خیل پشاور کے سنگ بنیاد کی تقریب میں جماعت اسلامی کے سربراہ سینیٹر سراج الحق کا خطاب )

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *