ایک”پھٹیچر”پر”پھٹیچر”کی تکرار کیوں ہونے لگی؟چند چبھتے ہوئے سوالات سامنے آ گئے

ایک”پھٹیچر”پر”پھٹیچر”کی تکرار کیوں ہونے لگی؟چند چبھتے ہوئے سوالات سامنے آ گئے

عمران خان نے پارٹی میٹنگ میں لفظ”پھٹیچر”کا کیا استعمال کیا سیاستدانوں سمیت عام عوام کو بھی جیسے موقع مل گیا لفظ”پھٹیچر”کی اصل دھجیاں اڑانے کا۔۔۔۔

مگر ذرا ٹھہرئیے!میں اپنا تعارف کروا دوں،میرا تعلق کسی سیاسی جماعت سے نہیں،میرا تعلق کسی طبقے سے نہیں،میں ایک ایسا عام انسان ہوں جو جب دل چاہتا ہےا س وقت اپنے اندر اٹھنے والے سوالوں کو قلم کی زبان عطا کر دیتا ہے۔

اس لیے ایک عام پاکستانی شہری کی حیثیت سے آج میرے دماغ میں بہت سے سوال اٹھ رہے ہیں جن کا جواب اگر کوئی دے سکے تو اس کا ایڈوانس شکریہ۔۔۔۔

سوال نمبر ایک:پی ایس ایل ایونٹ کے لیے جن بین الاقوامی کھلاڑیوں سے رابطے کیے گئے ان سے پیسے اور شرائط فائنل کرنے کے بعد کوئی تحریری دستاویز بھی لکھی گئی ہو گی؟لکھی یا سب کام زبانی جمع خرچ پر ہوا؟

سوال نمبر دو:جب کیون پیٹرسن جیسے کوئٹہ گلیڈی ایٹرز کے دیگر غیر ملکی کھلاڑیوں نے پی ایس ایل ایونٹ کھیلنے کے لئے لاہور آنے سے انکار کیا تو ان کے سامنے ان کا تحریری معاہدہ کیوں نہیں رکھا گیا جس میں لکھا ہوا تھا کہ ان کھلاڑیوں کو مکمل ایونٹ کے لیے ہائر کیا جا رہا ہے ناں کہ صرف شروع کے چند میچز کے لیے۔۔۔

سوال نمبر تین:جن کھلاڑیوں نے معاہدے کے باوجود پاکستان آنے سے انکار کیا ان کے خلاف اب تک کسی قسم کی قانونی کارروائی عمل میں کیوں نہیں لائی گئی؟جبکہ کھلاڑیوں کو پے منٹ مکمل ایونٹ کی گئی تھی؟

سوال نمبر چار:پی ایس ایل کامیاب رہا ایونٹ بہت کامیاب ہوا بہت مبارک،مگر پی ایس ایل سے حاصل ہونے والے منافع میں ملک کا حصہ کتنا رہا؟جبکہ ایونٹ کا بڑا حصہ دبئی میں تھا۔

سوال نمبر پانچ:عمران خان نے لفظ”پھٹیچر”ایک بار استعمال کیا مگر رات ہونے کو آئی صبح سے اب تک اسے کتنی بار استعمال کیا گیا؟

سوال نمبر چھ:عام عوام سے لے کر ملک کے سیاستدانوں تک نے کہا کہ عمران خان ایک کھلاڑی ہے اسے سیاست کا کچھ پتہ نہیں اسے کھیل تک ہی محدود رہنا چاہیئے تاکہ اس کی عزت برقرار رہے۔۔۔۔صاحب آپ کا یہ کہنا بھی قبول۔۔۔۔مگر یہ بتایئے کہ اگر ایک کرکٹر کرکٹ اور دوسرے کرکٹرز کے بارے میں رائے دے تو سارا پاکستان اس کی مخالفت پر کیوں اتر آئے؟

عمران خان غلط ہے۔۔۔بالکل غلط ہے۔۔۔ہماری روایات ہمیں اس بات کی اجازت نہیں دیتیں کہ ہم کسی کو کچھ برا کہیں اور”پھٹیچر”تو ہرگز بھی نہیں لیکن یاد رکھیے کہ ہم ایک ایسے معاشرے میں رہ رہے ہیں کہ جہاں کوا کالا نہیں بلکہ سفید ہے۔۔۔۔۔اور یہ سچ باور بھی کرایا جاتا ہے کہ کوا سفید ہے۔۔۔۔پھر”پھٹیچر”پر”پھٹیچر”کی تکرار کیوں؟

بلاگر:سعدیہ گیلانی

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *