پسنجر ایمبیسیڈرز کا مقصد مسافروں کی جیب ہلکی کروانا

پسنجر ایمبیسیڈرز کا مقصد مسافروں کی جیب ہلکی کروانا

برطانیہ کے سب سے بڑے ہیتھرو ایئرپورٹ پر پیسنجر ایمبیسیڈر  تعینات کئے گئے ہیں جن کا مقصد مسافروں کی رہنمائی کرنا ہےلیکن ان ایمبیسیڈرز کی طرف سے ایک ایسی حرکت کیے جانے کا انکشاف ہوا ہے کہ آئندہ مسافر ان سے رہنمائی لینے سے کترائیں گے۔

 رپورٹ کے مطابق ایک صحافی کی خفیہ انویسٹی گیشن میں انکشاف ہوا ہے کہ یہ ایمبیسیڈر مسافروں کو مختلف آفرز کا جھانسہ دے کر ٹرمینلز میں موجود سٹورز سے خریداری کرنے پر اکساتے ہیں جس کے عوض انہیں کمیشن دیا جاتا ہے ان ایمبیسیڈرز کے لیے 4ہزار پاﺅنڈ (تقریباً 5لاکھ 20ہزار روپے) روزانہ کی سیل کا ٹارگٹ دیا جاتا ہے جو ایمبیسیڈر یہ ٹارگٹ پورا کر لے اسے اچھا خاصا کمیشن دیا جاتا ہے۔

رپورٹ کے مطابق ہیتھرو ایئرپورٹ انتظامیہ کی طرف سے 250ایمبیسیڈرز بھرتی کیے گئے ہیں جو ارغوانی رنگ کی یونیفارم پہنتے ہیں ۔ انتظامیہ کا کہنا ہے کہ یہ ایمبیسیڈرز مسافروں کو پروازوں کی معلومات فراہم کرنے، ایئرپورٹ کے مختلف مقامات کا پتہ بتانے اور دیگر ایسے امور کے لیے متعین کیے گئے ہیں۔

تاہم انتظامیہ کی طرف سے یہ واضح نہیں کیا گیا کہ ان ایمبیسیڈرز کو یہ ٹاسک بھی دی گئی ہے کہ وہ مسافروں کو ایئرپورٹ پر رقم خرچ کرنے کی ترغیب دیں۔

رپورٹ کے مطابق یہ صحافی ہیتھرو ایئرپورٹ پر اپنی شناخت خفیہ رکھتے ہوئے ایمبیسیڈر بھرتی ہوا اور یہ انکشافات دنیا کے سامنے لے کر آیا۔ اس کی انویسٹی گیشن میں معلوم ہوا ہے کہ اب تک ایک ایمبیسیڈر سب سے زیادہ 10ہزار پاﺅنڈ(تقریباً 13لاکھ روپے) کی سیل کروا چکا ہے،ایمبیسیڈر کے روپ میں موجود اس صحافی کو دیگر ایمبیسیڈرز نے بتایا کہ وہ زیادہ تر چینی مسافروں کو ٹارگٹ بناتے ہیں کیونکہ وہ سب سے زیادہ رقم خرچ کرتے ہیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *