چوہدری نثار کے دو اسٹاف آفیسرز کے خلاف ایکشن،قانون کے شکنجے میں آگئے

چوہدری نثار کے دو اسٹاف آفیسرز کے خلاف ایکشن،قانون کے شکنجے میں آگئے

اسلام آباد:وفاقی دارالحکومت اسلام آباد کے ر یڈ زون میں سپریم کورٹ کے جسٹس قاضی فائز عیسٰی نے وزیرداخلہ چوہدری نثار کے دو سٹاف آفیسرز کی کالے شیشوں والی گا ڑیوں کا چالان کرادیا۔

پاکستان ٹرائب کے مطابق گزشتہ روز ر یڈزون میں واقع پنجاب ہاﺅس کی طرف جانے والی پولیس کی دو ڈبل ڈور پک اپ گاڑیوں کو پنجاب ہاﺅس اور ججز کالونی کی داخلی پولیس چوکی پر روک لیا گیا اور باضابطہ شناخت کے بعد انہیں جانے کی اجازت دی گئی۔

زرائع کے مطابق دونوں گاڑیاں اسلام آباد پولیس کے ایک ایس پی بلال ظفر اور اے ایس پی عمر خان کی زیر استعمال تھیں اور دونوں افسران اپنے سرکاری فرائض کے لئے جا رہے تھے۔

پولیس افسران چوہدری نثار کے سٹاف آفیسرز تھے۔ اسی دوران سپریم کورٹ کے جج جسٹس فائز عیسیٰ کا چوکی سے گزر ہوا تو انہوں نے ان گاڑیوں کے شیشوں پر لگے کالے پیپر کا سخت نوٹس لیتے ہوئے ڈیوٹی پر موجود انسپکٹر کو گاڑیوں کا چالان کرنے کاحکم دیا اور سپریم کورٹ کے ایس پی سکیورٹی کو اپنی رہائش گاہ پر طلب کیا۔

 ایس پی سکیورٹی احمد اقبال چند منٹ بعد ججز کالونی پہنچے اور اسی دوران ٹریفک پولیس کو بھی طلب کرلیا گیا اور دونوں گاڑیوں کے چالان کر دیئے گئے۔

ذرائع کے مطابق فاضل جج نے ایس پی احمد اقبال سے بات کرتے ہوئے ججز کالونی جیسے حساس علاقے میں کالے شیشے والی گاڑیوں کی موجودگی پر تحفظات کا اظہار کیا اور ایس پی کو یہ گاڑیاں ضبط کرنے اور شیشوں پر لگے کالے پیپراتارنے کے احکامات جاری کیے۔

ذرائع کے مطابق ایس پی احمد اقبال نے فاضل جج کو بتایا کہ قانون کے مطابق یہ گاڑیاں ضبط نہیں کی جا سکتیں کیونکہ یہ پولیس کی سرکاری گاڑیاں ہیں اوران کا صرف چالان کیا جاسکتا ہے۔

 مذکورہ ایس پی نے فاضل جج کو جرمانے کے ٹکٹ سمیت گاڑیوں کے خلاف لیے گئے ایکشن سے متعلق رپورٹ پیش کی۔ واقعے کی تمام تفصیلات سے سینئر پولیس حکام کو بھی تحریری طور پر آگاہ کر دیا گیا۔ جسٹس قاضی فائز عیسیٰ دونوں افسران کی گاڑیاں بند کرنے پر اصرار کرتے رہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *