سوشل میڈیا بچوں کو زندگی سےبیزارکرنےلگا،تحقیق

سوشل میڈیا بچوں کو زندگی سےبیزارکرنےلگا،تحقیق

لندن: سماجی رابطوں کی وسایب سائٹس کو روزانہ ایک گھنٹہ استعمال کرنے والے بچے اپنی حقیقی زندگی سے بیزار جب کہ لڑکیاں اس معاملے میں زیادہ بڑے خطرے کا شکار ہوتی ہیں۔

اس بات کا انکشاف حال ہی میں جاری کی گئی اس رپورٹ میں ہوا ہے جو 10 سے 15 سال عمر کے 4000 برطانوی بچوں اور بچیوں پر2010 سے 2014 کے دوران کی گئی تحقیق پر مشتمل ہے۔

تحقیقی مطالعے سے جڑے ماہرین کا کہنا ہے کہ سائبرورلڈ میں ہونے والی دھوکہ دہی یا تضحیک کا نشانہ بننا بھی زندگی سے بیزاری کا اہم سبب ہو سکتا ہے۔ سماجی رابطوں کی ویب سائٹس اس عمر کے بچوں اور بچیوں کو مفید سرگرمیوں سے دور کرنے کا بڑا ذریعہ ہیں۔

ماہرین کے مطابق یومیہ ایک گھنٹہ فیس بک اور اس جیسی سائٹس پر گزارنے والے بچے دوسروں کی نسبت اپنی زندگی سے 14 فیصد کم مطمئن رہتے ہیں۔ جب کہ بچیوں پر یہ اثرات زیادہ خوفناک رہتے ہیں۔

مطالعہ کے دوران بچوں اور بچیوں سے پوچھا گیا کہ وہ روزانہ کتنا وقت اور کن سائٹس پر گزارتے ہیں۔ اسی دوران ان سے زندگی،تعلیمی ادارے،اسکول کے کام،اہلخانہ،دوستوں اور اپنے ظاہری حلیہ کے متعلق احساسات جاننے کے لئے سوال کئے گئے۔

45 فیصد بچوں نے جواب دیا کہ وہ اسکول جانے والے دنوں میں روزانہ ایک گھنٹہ سے کم سماجی رابطوں کی ویب سائٹس پر صرف کرتے ہیں۔ جب کہ 10 فیصد ایسے بھی تھے جو روزانہ 4 گھنٹے یا اس سے زائد گزارتے پائے گئے۔

سروے کا حصہ بنائی جانے والی بچیوں کے جوابات سے محقیقین کا کہنا تھا کہ وہ اپنی زندگی،گھر،اسکول کے کام،دوستوں،،تعلیمی ادارے اور ظاہری حلیے کے متعلق ذیادہ بیزار نظرآئیں۔ خاص طور پر انہیں اپنے ظاہری حلیے اور تعلیمی ادارے کے متعلق شدید بے اطمینانی کا شکار پایا گیا۔

پاکستان ٹرائب ٹیکنالوجی ڈیسک کے مطابق رواں ماہ کے شروع میں سامنے آنے والی ایک رپورٹ میں کہا گیا تھا کہ سوشل میڈیا زندگیوں میں خوداذیتی کو وبا کی شکل دینے کی وجہ بن رہا ہے۔

خود کو زخمی کر لینے،زہر کھا لینے یا دوائیوں کی زیادہ مقدار استعمال کرنے کی وجہ سے اسپتالوں میں داخل ہونے والے بچوں کی تعداد میں گزشتہ 2 برسوں کے دوران 14 فیصد اضافہ ہوا ہے۔

ماہرین نے خبردار کیا ہے کہ سماجی رابطوں کی ویب سائٹ باالخصوص فیس بک،ٹوٹر اور انسٹاگرام غیرمطمئن بچوں اور بچیوں کی ایسی نسل تشکیل دے رہی ہیں جو اپنے دوستوں جیسا نظر آنے کی تگ و دو میں خوفناک حد تک غیرمطمئن ہو گئے ہیں۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *