شوہروں کیخلاف بیویوں کی مدد کرنے والا کاروبار

شوہروں کیخلاف بیویوں کی مدد کرنے والا کاروبار

بیجنگ: چین میں شادی شدہ خواتین کو شوہروں کی بیوفائی سے بچانے کیلئے شروع کئے گئے کاروبار نے پھلنے پھولنے کے نئے مواقع تلاش کر لئے ہیں۔

خواتین کو رقیبائوں سے نجات دلانے کا کام کرنے والی یہ کمپنیاں شادی شدہ مردوں کی طرف مائل عورتوں کو اپنے بے وفا محبوب کو چھوڑنے پر قائل کرنے کے لیے مختلف حربے اپناتی ہیں۔

یاد رہے کہ چین میں مردوں کے لیے محبوبہ کا ہونا صاحب حیثیت ہونے کی علامت اور لازمی فیشن بنتا جارہا ہے جس کے نتیجے میں چین میں طلاق کی شرح میں خوفناک اضافہ اور گھروں کی یکسوئی کا خاتمہ ہورہا ہے۔ یہ صورتحال معاشرتی طور پر تباہ کن ہے تاہم معاشی طور پر اسے کاروبار کی بنیاد بنانے والی کمپنیوں کا معاملہ خوب چمک رہا ہے۔

مقامی قانون اور روایات کے مطابق چین میں طلاق ہونے کی صورت میں عموما مطلقہ کو ہی پریشانی اٹھانی پڑتی ہے اور وہ تنہا رہ جاتی ہے۔۔

بیجنگ: چین میں شادی شدہ خواتین کو شوہروں کی بیوفائی سے بچانے کیلئے شروع کئے گئے کاروبار نے پھلنے پھولنے کے نئے مواقع تلاش کر لئے ہیں۔

خواتین کو رقیبائوں سے نجات دلانے کا کام کرنے والی یہ کمپنیاں شادی شدہ مردوں کی طرف مائل عورتوں کو اپنے بے وفا محبوب کو چھوڑنے پر قائل کرنے کے لیے مختلف حربے اپناتی ہیں۔

یاد رہے کہ چین میں مردوں کے لیے محبوبہ کا ہونا صاحب حیثیت ہونے کی علامت اور لازمی فیشن بنتا جارہا ہے جس کے نتیجے میں چین میں طلاق کی شرح میں خوفناک اضافہ اور گھروں کی یکسوئی کا خاتمہ ہورہا ہے۔ یہ صورتحال معاشرتی طور پر تباہ کن ہے تاہم معاشی طور پر اسے کاروبار کی بنیاد بنانے والی کمپنیوں کا معاملہ خوب چمک رہا ہے۔

مقامی قانون اور روایات کے مطابق چین میں طلاق ہونے کی صورت میں عموما مطلقہ کو ہی پریشانی اٹھانی پڑتی ہے اور وہ تنہا رہ جاتی ہے۔۔

بیجنگ: چین میں شادی شدہ خواتین کو شوہروں کی بیوفائی سے بچانے کیلئے شروع کئے گئے کاروبار نے پھلنے پھولنے کے نئے مواقع تلاش کر لئے ہیں۔

خواتین کو رقیبائوں سے نجات دلانے کا کام کرنے والی یہ کمپنیاں شادی شدہ مردوں کی طرف مائل عورتوں کو اپنے بے وفا محبوب کو چھوڑنے پر قائل کرنے کے لیے مختلف حربے اپناتی ہیں۔

یاد رہے کہ چین میں مردوں کے لیے محبوبہ کا ہونا صاحب حیثیت ہونے کی علامت اور لازمی فیشن بنتا جارہا ہے جس کے نتیجے میں چین میں طلاق کی شرح میں خوفناک اضافہ اور گھروں کی یکسوئی کا خاتمہ ہورہا ہے۔ یہ صورتحال معاشرتی طور پر تباہ کن ہے تاہم معاشی طور پر اسے کاروبار کی بنیاد بنانے والی کمپنیوں کا معاملہ خوب چمک رہا ہے۔

مقامی قانون اور روایات کے مطابق چین میں طلاق ہونے کی صورت میں عموما مطلقہ کو ہی پریشانی اٹھانی پڑتی ہے اور وہ تنہا رہ جاتی ہے۔۔

بیجنگ: چین میں شادی شدہ خواتین کو شوہروں کی بیوفائی سے بچانے کیلئے شروع کئے گئے کاروبار نے پھلنے پھولنے کے نئے مواقع تلاش کر لئے ہیں۔

خواتین کو رقیبائوں سے نجات دلانے کا کام کرنے والی یہ کمپنیاں شادی شدہ مردوں کی طرف مائل عورتوں کو اپنے بے وفا محبوب کو چھوڑنے پر قائل کرنے کے لیے مختلف حربے اپناتی ہیں۔

یاد رہے کہ چین میں مردوں کے لیے محبوبہ کا ہونا صاحب حیثیت ہونے کی علامت اور لازمی فیشن بنتا جارہا ہے جس کے نتیجے میں چین میں طلاق کی شرح میں خوفناک اضافہ اور گھروں کی یکسوئی کا خاتمہ ہورہا ہے۔ یہ صورتحال معاشرتی طور پر تباہ کن ہے تاہم معاشی طور پر اسے کاروبار کی بنیاد بنانے والی کمپنیوں کا معاملہ خوب چمک رہا ہے۔

مقامی قانون اور روایات کے مطابق چین میں طلاق ہونے کی صورت میں عموما مطلقہ کو ہی پریشانی اٹھانی پڑتی ہے اور وہ تنہا رہ جاتی ہے۔۔

یاد رہے کہ چین میں مردوں کے لیے محبوبہ کا ہونا صاحب حیثیت ہونے کی علامت اور لازمی فیشن بنتا جارہا ہے جس کے نتیجے میں چین میں طلاق کی شرح میں خوفناک اضافہ اور گھروں کی یکسوئی کا خاتمہ ہورہا ہے۔ یہ صورتحال معاشرتی طور پر تباہ کن ہے تاہم معاشی طور پر اسے کاروبار کی بنیاد بنانے والی کمپنیوں کا معاملہ خوب چمک رہا ہے۔

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *