امجد صابری کا قاتل

امجد صابری کا قاتل

معروف قوال امجد صابری قتل کیس میں انتہائی اہم پیش رفت کے تحت قتل میں براہ راست ملوث ملزم عمران صدیقی کو گرفتار کرلیا گیا ہے۔I

میڈیا رپورٹس کے مطابق ملزم کی شناخت میں سی سی ٹی وی فوٹیج اور سی پی ایل سی کے تیار کردہ خاکہ سے مدد ملی۔

یہ بات بھی واضح ہو چکی ہے کہ امجد صابری قتل کا ملزم عمران صدیقی، سابقہ جوائنٹ یونٹ انچارج لیاقت آباد یونٹ 163 ہے۔ ایم کیو ایم ( الطاف گروپ )سے تعلق رکھنے والے ملزم  نے دوران تفتیش اپنے ساتھیوں کے نام بھی اگل دیئے ہیں۔

ملزم کی گرفتاری کے لئے کراچی کے ضلع وسطی پولیس نے حساس اداروں کے ساتھ مل کر کارروائی کی۔

ذرائع نے انکشاف کیا ہے کہ امجد صابری پر گولیاں عمران صدیقی نے ہی چلائی تھیں۔ جب کہ ملزم عمران صدیقی نے تحقیقات میں جن دیگر ساتھیوں کے نام ظاہر کئے ہیں ان کی گرفتاری کیلیے چھاپے مارے جارہے ہیں۔ ذرائع کے مطابق امجد صابری کا قتل رقم کے تنازعہ پر کیا گیا، اس سلسلے میں صدف پیراڈائز نامی زیر تعمیر عمارت کا ذکر بھی آتا ہے، جس میں امجد صابری کے شئیر بھی تھے جب کہ دوسرا پارٹنر چند ماہ پہلے ملک چھوڑ گیا تھا۔

رپورٹس کے مطابق ملزم عمران صدیقی کو خصوصی احکامات دے کر چند ماہ قبل ہی تھائی لینڈ سے کراچی بھیجا گیا تھا۔ ملزم کے پاسپورٹ کی کاپی اور دیگر تفصیلات پولیس نے حاصل کرلی ہیں۔

ایم کیو ایم سے تعلق رکھنے والا ملزم ڈسٹرکٹ میونسپل کارپوریشن شرقی میں بطور سینیٹری ورکر گھوسٹ ملازم بھی ہے۔ جہاں سے اسے ہر ماہ باقاعدگی سے تنخواہ بھی ملتی تھی۔

ملزم کو کے ایم سی میں ملازمت ایم کیو ایم نے اپنے شہداء کے کوٹے پر دلوائی۔ عمران صدیقی نے دو شادیاں کیں جن سے 6 بچے ہیں، کے ایم سی میں گھوسٹ ملازمت کے علاوہ ملزم شادی بیاہ کی تقریبات میں ویڈیو موویز بنانے اور اپنے علاقے میں بچوں کے ویڈیو گیمز چلانے کا کاروبار بھی کرتا تھا۔

تو جناب اب جب کہ سی پی ایل سی کا عینی گواہان کی شہادت پر بنایا گیا خاکہ 100 فی صد درست نکلا اور اس کے نیچے درج تمام مندرجات بھی حرف بہ حرف درست ۔ کہاں ہیں جو اس خاکے کو لے کر پاکستان میں نفرت پھیلا رہے تھے؟

کہاں ہیں امجد صابری کے نام پر اوراق کے اوراق سیاہ کرنے والے اور کئی کئی گھنٹوں ٹیلی تھون شوز کرنے والے؟

کہاں ہے وہ ایجویئر لندن کا رہائشی، جو اس خاکے پر سی پی ایل سی اور رینجرز کو مغلظات بک رہا تھا، قتل کی دھمکیاں دے رہا تھا اور نسلوں سے انتقام لینے کے دعوی کر رہا تھا؟

کہاں ہیں وہ لوگ جو خودساختہ جلا وطن فرد کی ٹیلیفونک تقاریر پر جی بھائی جی بھائی کی رٹ لگائے سر دھن رہے تھے؟

کہاں ہیں وہ جعلساز جو کبھی کسے موبائل فون چھیننے والی کی تصویریں قاتل کے طور پر پھیلا رہے تھے اور کبھی کسی بڑھیا کو لالچ اور دھمکیاں دے کر میڈیا پر لا رہے تھے کہ خاکہ میرے گمشدہ بیٹے سے ملتا ہے؟ زبانیں گنگ کیوں ہیں؟

بتاؤ کیوں مارا امجد صابری کو؟ کس نے مارا ؟ کس کے کہنے پر مارا؟

لاکھ بیٹھے کوئی چھپ چھپ کے کمیں گاہوں میں …

خون خود دیتا ہے، جلادوں کے مسکن کا سراغ …

سازشیں لاکھ اوڑھاتی رہیں ظلمت کا نقاب …

لے کے ہر بوند نکلتی ہے ہتھیلی پہ چراغ …

بلاگر: محمد طارق خان

ویب ڈیسک

یہ پاکستان ٹرائب کا آفیشل ویب ڈیسک اکاؤنٹ ہے۔

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *